جدیدیت پسند بتائیں گے یا سائنس دان؟

                سائنس کیا ہے اورکیا نہیں؟ اس کو سمجھنے، جاننے اور جانچنے کے لیے ہمارے پاس پیمانہ، معیار، منہاج، اصول ، قدر، کسوٹی ، فرقان، برہان اور میزان جدیدیت پسندوں کے افکار و خیالات نہیں بلکہ مغرب کے وہ سائنس داں فلسفی اور فلاسفہ ہیں جو سائنسی علوم کی نظری، عملی اور ما بعد الطبیعی اساسیات سے واقف ہیں، سائنس جن کے علم و تجربے، رویے اور تہذیب و تاریخ کا رواں دواں حصہ ہے۔ وہ فلسفی اور سائنس داں سائنس کے بارے میں کیا کہتے ہیں اصل چیز ان کا بیان ہے، افسوس کہ متجدّدین نے سائنس کی من پسند تشریحات قوم کے سامنے پیش کی ہیں کیوں کہ وہ جس سائنس سے مرعوب و مغلوب، مفتوح  ومضروب اور مجروح و مقتول ہیں، اس سائنس کے خلاف مغرب میں اتنا کچھ لکھ دیا گیا ہے کہ اسے اس مختصر زندگی میں پڑھنا ممکن نہیں۔ سائنس کبھی قطعی، حتمی اور حقیقی علم مہیا نہیں کرتی وہ کسی جزو کا بھی جزوی علم دیتی ہے۔ اس صدی کا آئن اسٹائن اور نوبل پرائز یافتہ سائنس داںفائن مین (R. P. Feynman)  میں لکھتا ہے:

                Each piece, or part, of the whole of whole nature is always merely an approximation to the complete truth, or the complete truth so far as we know it. In fact, everything we know is only some kind of approximation, because we know that we do not know all the laws as yet. Therefore, things must be learned only to be unlearned again or, more likely, to be corrected. The principle of science, the definition, almost, is the following:

The test of all knowledge is experiment. Experiment is the sole judge of scientific” truth.” But what is the source of knowledge? Where do the laws that are to be tested come from? Experiment, itself, helps to produce these laws, in the sense that it gives us hints. But also needed is imagination to create from these hints the great generalizations to guess at the wonderful, simple, but very strange patterns beneath them all, and then to experiment to check again whether we have made the right guess. This imagining process is so difficult that there is a division of labor in physics: there are theoretical physicists who imagine, deduce, and guess at new laws, but do not experiment; and then there are experimental physicists who experiment, imagine, deduce, and guess. For example, the mass of an object never seems to change: a spinning top has the same weight as a still one. So a “law” was invented: mass is constant, independent of speed. That “law” is now found to be incorrect. Mass is found to increase with velocity, but appreciable increases require velocities near that of light. A true law is: if an object moves with a speed of less than one hundred miles a second the mass is constant to within one part in a million. In some such approximate form this is a correct law. So in practice one might think that the new law makes no significant difference. Well, yes and no. For ordinary speeds we can certainly forget it and use the simple constant-mass law as a good approximation. But for high speeds we are wrong, and the higher the speed, the more wrong we are.

                Finally, and most interesting, philosophically we are completely wrong with the approximate law. Our entire picture of the world has to be altered even though the mass changes only by a little bit. This is a very peculiar thing about the philosophy, or the ideas, behind the laws. Even a very small effect sometimes requires profound changes in our ideas.

 1.سائنس جزوی علم دیتی ہے کلی نہیں:

                سائنس دان کائنات کو ایک کلیت یا وحدت میں نہیں دیکھ سکتے وہ اس صلاحیت سے قاصر ہیں، وہ کائنات کو مختلف حصوں،  خانوں، اجزا اور ٹکڑوں میں بانٹ کر دیکھتے ہیں، لہٰذا وہ کل [whole] کا علم حاصل کرنے کی صلاحیت ہی نہیں رکھتے ،فائن مین یہی بات دوسرے انداز سے کہتا ہے:

If our small minds, for some convenience, divide this glass of wine, this universe, into parts physics, biology, geology, astronomy, psychology, and so on remember that nature does not know it! So  let us put it all back together, not forgetting ultimately what it is for. Let it give us one more final pleasure: drink it and forget it all!

2. اس جزوی علم پر، جو کسی ایک جزو کے بھی نہایت جزوی جُز کا احاطہ کرتا ہے، اس کی بنیاد پر  انسانی فطرت اور کائنات کو پہچاننے کا دعویٰ کرناایک لغو دعویٰ ہے ، خود فائن مین اعتراف کرتا ہے :

In the cells of living systems there are many elaborate chemical reactions, in which one compound is changed into another and another. To give some impression of the enormous efforts that have gone into the study of

 Richard P. Feynman, Six Easy Pieces: Essentials of Physics Explained by Its Most Brilliant Teacher, USA: Helix Books,1995,pp.2-3.

  1. Ibid., p.67.

biochemistry, summarizes our knowledge to date on just one small part of the many series of reactions which occur in cells, perhaps a percent or so of it.

 سائنس کی حقیقت کے متعلق فائن مین کی متذکرہ کتاب کے دیبا چہ نگارنے نہایت اہم بات لکھی ہے جو جدیدیت پسند مفکرین کی آنکھیں کھولنے کے لیے کافی ہے:

                There is a popular misconception that science is an impersonal, dispassionate, and thoroughly objective enterprise. Whereas most other human activities are dominated by fashions, fads, and personalities, science is supposed to be constrained by agreed rules of procedure and rigorous tests. It is the results that count, not the people who produce them.

                This is, of course, manifest nonsense. Science is a people-driven activity like all human endeavor, and just as subject to fashion and whim.

2.سائنس کا سفر مفروضات اور اندازوں پر منحصر ہے:

                قیاس ،گمان، مفروضات اور اندازوں کے ذریعے سائنس کا سفر آگے بڑھتا ہے۔ کوئی سائنس داں سائنسی نتائج کو حتمی اور قطعی تسلیم نہیں کرتا۔ Quantum Electro Dynamics جو سائنس کی دنیا میں علم کے سیل رواں کا نیا دروازہ ہے۔ جس کے بارے میں عمومی رائے یہی ہے کہ یہ نظریہ سائنس کے ہر مسئلے، ہر مشکل کو بیان کرنے اور اصول و قوانین وضع کرنے کی غیر معمولی صلاحیت رکھتا ہے، لیکن اس کے باوجود بہت سے معاملات اور سائنسی امور میں یہ رہنمائی کرنے سے قاصر رہتاہے۔ اس قانون کی موجودگی کے باوجود بہت سے امور اندازے، قیاس اورگمان پر طے کیے جاتے ہیں۔ کسی سائنس داں کو یہ معلوم نہیں کہ جوہرm] [Ato  کے مرکز [Nucleus] میں کیا عمل اور ردِّعمل ہو رہا ہے اور اس کی حرکیات کیا ہیں؟

                We have a new kind of particle to add to the electron, the proton, and the neutron. That new particle is

  1. Ibid.,p.52. 2. Ibid.,p.ix.

called a photon. The new view of the interaction of electrons and protons that is electromagnetic theory, but with everything quantum-mechanically correct, is called Quantum Electrodynamics. This fundamental theory of the interaction of light and matter, or electric field and charges, is our  greatest success so far in physics. In this one theory we have the basic rules for all ordinary phenomena except for gravitation and nuclear processes. For example, out of Quantum Electrodynamics come all known electrical, mechanical, and chemical laws: the laws for the collision of billiard balls, the motions of wires in magnetic fields, the specific heat of carbon monoxide, the color of neon signs, the density of salt, and the reactions of hydrogen and oxygen to make water are all consequences of this one law. All these details can be worked out if the situation is simple enough for us to make an approximation, which is almost never, but often we can understand more or less what is happening. At the present time no exceptions are found to the Quantum Electrodynamic laws outside the nucleus, and there we do not know whether there is an exception because we simply do not know what is going on in the nucleus

.1 سائنس دان تمام سائنسی نظریات، تجربات کے بعد قائم نہیں کرتے، بہت سے سائنسی نظریات، قیاس، گمان، وجدان اور اندازے پر قائم کیے جاتے ہیں جیسا کہ Yukawa نے مختلف ذرات [particles] کے بارے میں پیش گوئی کی تھی جو پوری ہوگئی۔

                سائنس تجربات و مشاہدات کے ذریعے آگے بڑھتی ہے لیکن آگے بڑھنے کے باوجود سائنس یہ کہنے کی صلاحیت نہیں رکھتی:

 

  1. Ibid., p.37 .

Whether it is right or wrong but we do know that it is a little wrong or at least incomplete

یہ الفاظ راقم السطور کے نہیں ، بلکہ اس صدی کے آئن اسٹائن کے ہیں،ان الفاظ کی تفصیل فا ئن مین کے   الفاظ میں پڑھیے:

It would be impossible to predict exactly what would happen. We can only predict the odds! This would mean, if it were true, that physics has given up on the problem of trying to predict exactly what will happen in a definite circumstance. Yes! Physics has given up. We do not know how to predict what would happen in a given circumstance, and we believe now that it is impossible, that the only thing that can be predicted is the probability of different events. It must be recognized that this is a retrenchment in our earlier ideal of understanding nature. It may be a backward step, but no one has seen a way to avoid it.1

What are the nuclei made of, and how are they held together? It is found that the nuclei are held together by enormous forces. When these are released, the energy released is tremendous compared with chemical energy, in the same ratio as the atomic bomb explosion is to a TNT explosion, because, of course, the atomic bomb has to do with changes inside the nucleus, while the explosion of TNT has to do with the changes of the electrons on the outside of the atoms. The question is, what are the forces which hold the protons and neutrons together in the nucleus? Just as the electrical interaction can be connected to a particle, a photon, Yukawa suggested that the forces between

 

  1. Ibid.,p.134.

neutrons and protons also have a field of some kind, and that when this field jiggles it behaves like a particle. Thus there could be some other particles in the world besides protons and neutrons, and he was able to deduce the properties of these particles from the already known characteristics of nuclear forces. For example, he predicted they should have a mass of two or three hundred times that of an electron; and lo and behold, in cosmic rays there was discovered a particle of the right mass! But it later turned out to be the wrong particle. It was called A mmeson, or muon.1

                However, a little while later, in 1947 or 1948, another particle was found, the p-mneson, or pion, which satisfied Yukawas criterion.. Besides the proton and the neutron, then, in order to get nuclear forces we must add the pion. Now, you say, “Oh great’, with this theory we make quantum nucleodynamics using the pions just like Yukawa wanted to do, and see if it works, and everything will be explained.” Bad luck! it turns out that the calculations that are involved in this theory are so difficult that no one has ever been able to figure out what the consequences of the theory are, or to check it against experiment, and this has been going on now for almost twenty years!

                So we are stuck with a theory, and we do not know whether it is right or wrong, but we do know that it is a little wrong, or at least incomplete. While we have been dawdling around theoretically, trying to calculate the consequences of this theory, the experimentalists have been discovering

 

  1. Ibid.,p.38.

 some things. For example, they had already discovered this m-meson or muon, and we do not yet know where it fits. Also, in cosmic rays, a large number of other “extra” particles were found. It turns out that today we have approximately thirty particles, and it is very difficult to understand the relationships of all these particles, and what nature wants them for, or what the connections are from one to another. We do not today understand these various particles as different aspects of the same thing, and the fact that we have so many unconnected particles is a representation of the fact that we have so much unconnected information without a good theory. After the great successes of Quantum Electrodynamics, there is a certain amount of knowledge of nuclear physics which is rough knowledge, sort of half experience and half theory, assuming a type of force between protons and neutrons and seeing what will happen, but not really understanding where the force comes from. Aside from that, we have made very little progress.

1. فائن مین کے یہ حوالے اس لیے دیے گئے ہیں کہ جدیدیت پسند حضرات ابتدا سے آج  تک سب سائنس سے متاثر ہیں، لہٰذا مناسب معلوم ہوا کہ اس میدان کے عبقری سائنس دان کے اعترافات سائنس کی پرستش میں مبتلا مریضوں کی خدمت میں پیش کر دیے جائیں۔ فائن مین کون ہے؟ اور اس کا جدید سائنس میں کیا مقام ہے؟ اسے جاننے کے لیے درج ذیل تعارف پڑھیے کہ فائن مین کا اصل کارنامہ کیا ہے؟

                Initially, Feynman made a name for himself from his work on the theory of subatomic particles, specifically the topic known as Quantum Electrodynamics or QED. In fact,

 

  1. Ibid. p.39

 the quantum theory began with this topic. In 1900, the German physicist Max Planck proposed that light and other electromagnetic radiation, which had hitherto been regarded as waves, paradoxically behaved like tiny packets of energy, or “quanta,” when interacting with matter. These particular quanta became known as photons. By the early 1930s the architects of the new quantum mechanics had worked out a mathematical scheme to describe the emission and absorption of photons by electrically charged particles such as electrons. Although this early formulation of QED enjoyed some limited success, the theory was clearly flawed. In many cases calculations gave inconsistent and even infinite answers to well-posed physical questions. It was to the problem of constructing a consistent theory of QED that the young Feynman turned his attention in the late 1940s.

                To place QED on a sound basis it was necessary to make the theory consistent not only with the principles of quantum mechanics but with those of the special theory of relativity too. These two theories come with their own distinctive mathematical machinery, complicated systems of equations that can indeed be combined and reconciled to yield a satisfactory description of QED. Doing this was a tough undertaking, requiring a high degree of mathematical skill, and was the approach followed by Feynman’s contemporaries. Feynman himself, however, took a radically different route so radical, in fact, that he was more or less able to write down the answers straight away without using any mathematics.

                To aid this extraordinary feat of intuition, Feynman invented a simple system of eponymous diagrams. Feynman diagrams are a symbolic but powerfully heuristic way of picturing what is going on when electrons, photons,  and other particles interact with each other. These days Feynman diagrams are a routine aid to calculation, but in the early 1950s they marked a startling departure from the traditional way of doing theoretical physics.

The particular problem of constructing a consistent theory of quantum electrodynamics, although it was a milestone in the development of physics, was just the start. It was to define a distinctive Feynman style, a style destined to produce a string of important results from a broad range of topics in physical science. The Feynman style can best be described as a mixture of reverence and disrespect for received wisdom.

 .1 دو ہزار سال تک ارسطو اور یونانی سائنس کے تراشیدہ نظریے زمین و زماں اور مکان کی حرکت سے متعلق مستعمل و مسلط رہے، پوری دنیا کے علمی حلقوں بشمول مذہب، سائنس اور فلسفے کا اس پر اجماع رہا، لیکن کاپر نیکس، گیلی لیواور نیوٹن کے آتے آتے حرکت اور زماں و مکاں سے متعلق یونانی سائنس و فلسفے کے تمام مفروضات غلط ہوگئے ،نیوٹن کے قوانین حرکت نے دو ہزار سال کی تاریخ بدل دی ،لیکن صرف دو سو سال بعد آئن اسٹائن کے نظریہ اضافیت نے نیوٹن کے قوانین کو غلط ثابت کیا اس موقف کی تشریح کے لیے فائن مین [Feynman] کا موقف پڑھیے :

Having described the idea of the electromagnetic field, and that this field can carry waves, we soon learn that these waves actually behave in a strange way which seems very unwavelike. At higher frequencies they behave much more like particles. It is quantum mechanics, discovered just after 1920, which explains this strange behavior. In the years

 

  1. Ibid.,pp. x – xi.

before 1920, the picture of space as a threedimensional space, and of time as a separate thing, was changed by Einstein, first into a combination which we call space-time, and then still further into a curved space-time to represent gravitation. So the “stage” is changed into space-time, and gravitation is presumably a modification of space-time. Then it was also found that the rules for the motions of particles were incorrect. The mechanical rules of “inertia” and “forces” are wrong – Newton’s laws are wrong – in the world of atoms. Instead, it was discovered that things on a small scale behave nothing like things on a large scale. That is what makes physics difficult and very interesting. It is hard because the way things behave on a small scale is so “unnatural”; we have no direct experience with it. Here things behave like nothing we know of, so that it is impossible to describe this behavior in any other than analytic ways. It is difficult, and takes a lot of imagination.

1.Another most interesting change in the ideas and philosophy of science brought by quantum mechanics is this : it is not possible to predict exactly what will happen in any circumstance.

2. سائنس کی معروضیت کا دعویٰ: ایک فسانہ :

سائنسی علم کے بارے میں ایک مفروضہ یہ بھی تھا کہ اس عظیم مشاہداتی علم کا ادراک جو تجربے کے ذریعے حاصل ہوتا ہے انہی حالات، اسباب اور شرائط کے ساتھ کسی بھی سائنسی تجربے کو دنیا بھر میں ہر جگہ کوئی بھی شخص بلا لحاظ نسل، مذہب، زبان اور رنگ دہرا سکتا ہے اور اس سے وہی نتائج اخذکرسکتاہے جو کسی دوسرے سائنس داں نے اسی طریقے سے کسی اور براعظم میں اخذ کیے تھے ،لیکن  Feynmanاس بارے میں بھی بتاتا ہے کہ:

 

  1. Ibid.,p.33. 2. Ibid.,pp.34-35.

For example, it is possible to arrange an atom which is ready to emit light, and we can measure when it has emitted light by picking up a photon particle, which we shall describe shortly. We cannot, however, predict when it is going to emit the light or, with several atoms, which one is going to. You may say that this is because there are some internal “wheels” which we have not looked at closely enough. No, there are no internal wheels; nature, as we understand it today, behaves in such a way that it is fundamentally impossible to make a precise prediction of exactly what will happen in a given experiment. This is a horrible thing; in fact, philosophers have said before that one of the fundamental requisites of science is that whenever you set up the same conditions, the same thing must happen. This is simply not true, it is not a fundamental condition of science. The fact is that the same thing does not happen, that we can find only an average, statistically, as to what happens. Nevertheless, science has not completely collapsed. Philosophers, incidentally, say a great deal about what is absolutely necessary for science, and it is always, so far as one can see, rather naive, and probably wrong. For example, some philosopher or other said it is fundamental to the scientific effort that if an experiment is performed in, say, Stockholm, and then the same experiment is done in, say, Quito, the same results must occur. That is quite false. It is not necessary that science do that; it may be a fact of experience, but it is not necessary. For example, if one of the experiments is to look out at the sky and see the aurora borealis in Stockholm, you do not see it in Quito; that is a different phenomenon.

1.عقل کی محدودیت اور نارسائی: کانٹ کا اعتراف :

            کانٹ نے اپنی کتاب Critique of Pure Reason [New York: Dolphin Books, 1961] میں عقل اور طبیعیات کی حدود واضح کردی تھیںکہ محدود عقل لا محدود کا ئنات اور ماورائے عقل امور کو نہیں پاسکتی۔ کسی شے کا ورائے عقل ہونا اور خلاف عقل ہونا دو مختلف اُمورہیں۔ عقل کا دائرہ کہاں سے شروع ہوتا ہے اور کہاں ختم ہوتا ہے جہاں عقل کا دائرہ ختم ہوگیا اس دائرے سے باہر کے امور میں عقل عاجز درماندہ، پسماندہ اور ناکارہ ہے۔ یہاں اپنی محدودیت کا اعتراف کرنے کے بجائے اگر عقل اپنے دائرے سے باہر کے امور کو خلاف عقل قرار دے تو خود یہ غیر عقلی رویہ ہوگا۔ عقل طبیعی دنیا کے بھی تمام امور پر حاوی نہیں ہوسکتی تو مابعد الطبیعیاتی امور میں اس کی دخل اندازی ناممکن بلکہ محال ہے، محدود عقل کے تجربات اور محدود مشاہدات سے اخذ کردہ نتائج بھی محدود پیمانے [partly correct] پر درست ہوتے ہیں۔ قطعی اور بالکل درست نہیں ہوتے، احتمالاً  درست[probably true]  ہوسکتے ہیں۔ سورج اور چاند کو صدیوں سے گردش کرتا ہوا دیکھ کر قدیم سائنس ہزارہا سال تک ہمیں مشاہدات کی بنا پر یہ بتاتی رہی کہ سورج اور چاند گردش کر رہے ہیں۔ زمین ساکن ہے اس نظریے کو کاپرنیکس نے معرض سوال بنا دیا۔ لیکن جدیدیت پسند مفکّرین طبیعیات اور سائنس کے ذریعے ما بعد الطبیعیاتی سوالات کو حل کرنے کے اس کام میں مصروف ہیں ،جو ان سے پہلے یورپ میں مسترد ہو چکا تھا، وہ مسترد شدہ نظریات کے ملبے سے سائنس و اسلام کا محل تعمیر کرنے کی منصوبہ بندی میں مصروف ہیں،کیا نفس سائنس کا موضوع ہے؟ اِ ن حضرات کی یہ بات بھی بالکل غلط ہے کہ سائنس نفس [Self] کو موضوع گفتگو بناتی ہے نفس سائنس کے دائرے سے باہر کی چیز ہے کیونکہ اسے تجربہ گاہ میں جانچا نہیں جاسکتا۔ سوشل سائنس میں سائیکالوجی نفس کے بارے میں بعض دعوے ضرور کرتی ہے مگر یہ تمام دعوے اور تجربات عقلی اور مادی منہاج سے تعلق رکھتے ہیں۔ اس کا روحانیت اور مابعد الطبیعیات سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ وہ سائنس جو زندگی سے ایک آدھ ٹکڑا نوچ سکتی ہے کل کا علم نہیں رکھتی۔ حقیقت کے بھی کسی محدود جزو کا محض  جزوی علم ہی رکھتی ہے۔ حقیقت کا جزو [part of reality] در اصل حقیقت نہیں [not reality] ہوتا وہ کچھ اور ہوجاتا ہے، مثلاً سوڈیم [Na] اور کلورین [Cl] آپس میں ملتے ہیں تو [NaCl] نمک ]سوڈیم کلورائیڈ[ بناتے ہیں لیکن اگر سوڈیم کو کلورین سے الگ کر دیا جائے تو کلورین ایک خطرناک عنصر ہے جو ہلاکت پھیلا سکتا ہے۔ لیکن سوڈیم کے ساتھ مل کر اس عنصر کی حقیقت و ماہیت، اصلیت و نوعیت اور کیفیت و طبیعت بدل جاتی ہے۔ جب ایک کل [whole] کو اجزا [parts] میں تقسیم کیا جاتا ہے تو وہ اپنی روح، طاقت، حقیقت اور

 

  1. Ibid.,p.35.

 جوہر [essence] کھو دیتا ہے وہ کچھ اور ہوجاتا ہے۔روح کے بغیر مادے کی کوئی حیثیت و معنویت نہیں۔ معنویت کسی شے کی کلیت میں ہوتی ہے اور جب اسے اجزا میں توڑ کر دیکھا جائے تو اس کی معنویت سلب ہوجاتی ہے، عصر حاضر میں جدیدیت پسند علما کے روحا نیت سے عاری فتاویٰ کا سبب بھی اسی غلط طریقہ کار کی پیروی ہے۔ کسی جزو کو اس کے کل تناظر اور کلیت سے الگ کرکے، اس کی حقیقت کو نظر انداز کرکے جب ایک جزو پر فتویٰ دیا جائے گا تو یہ عمل نہ صرف غیر علمی بلکہ روحانیت سے عاری بلکہ اس کے منافی ہوگا۔

سائنسی طریقۂ علم سے مذہب کی توثیق: ایک غیر علمی رویہ:

            سائنسی طریقۂ علم سے مذہب کی تردید و توثیق کا کام لیناغیر علمی رویہ ہے، اگر کوئی علم سائنسی بنیادوں پر ثابت نہ ہوسکے تو اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ وہ علم نہیں ہے۔ جدیدیت پسند مسلم مفکرین  صرف سائنس کو علم سمجھتے ہیں جب کہ سائنس عقلی علوم کی ایک جزوی، غیر قطعی، ظنی اور امکانی جہت کے سوا کچھ نہیں۔

             فائن مین جس نے Theory of Subatomic Particles or QED Quantum Electro Dynamics میں محیر العقول کام کیا ہے جس پر اسے نوبل پرائز بھی دیا گیا اپنی کتاب Six Easy Pieces میں صرف سائنس کو علم سمجھنے والوں کو بتاتا ہے کہ :

If a thing is not a science it is not necessarily bad, for example love is not a science so if something is said not to be a science, it does not mean that there is something wrong with it, it just means that it is not a science.

  1. ایک غیر مسلم، اپنے عہد کا سب سے بڑا طبیعیات داں اور کوانٹم الیکٹرو ڈائنمکس کا صف اول کا

سائنس داں سائنس سے مرعوب نہیں ہے، وہ کسی چیز کے اہم، علمی، اور حقیقی ہونے کے لیے  اس کا سائنسی ہونا ضروری نہیں سمجھتا۔لیکن ہمارے جدیدیت پسند اسلامی مفکرین اسلام کے مقابلے میں سائنس سے اس درجے مغلوب ومرعوب ہیں کہ وہ سائنسی تشریح کے بغیر اسلام کی علمی تعبیر ممکن نہیں سمجھتے ، اُن کا خیال ہے کہ اگر ایسا نہ کیا گیا تو نوجوان اسلام کو رد کردیں گے۔ کیونکہ عہد جدید کے نوجوان کا ذہن حسی، افادی، تجربی، منطقی ہے، جس کے لیے اسلام کے قدیم علمی معیارات ناکافی اور لائقِ التفات نہیں ہیں۔ یہ بیان اس بات کا غماز ہے کہ ہمارے یہ دوست عہد حاضرکے ذہن سے بھی قطعاً ناواقف ہیں انھیں  یہ تک معلوم نہیں کہ افادیت پسند ذہن اس قابل ہی نہیں رہتا کہ وہ جسم اور لذات کی سطح سے اوپر اُٹھ سکے، وہ اہم مسائل پر غور کرنے اور سوال اُٹھانے کی صلاحیت ہی کھو دیتا ہے۔

 

  1. Ibid.,p.84.

سائنس کی زبان ریاضی، سائنس نہیں: فائن مین :

            ریاضی کو سائنس داں نیچرل سائنس نہیں تسلیم کرتے کیونکہ اسے تجربے سے ثابت نہیں کیا جاسکتا۔ Feynman کے الفاظ میں :

Mathematics is not a science from our point of view in the sense that it is not a natural science. The test of its validity is not experiment.1

            ریاضی سائنس کی زبان ہے لیکن تجربے سے ماروا ہے، اگر ریاضی کو سائنس سے نکال دیا جائے تو سائنس بہری، گونگی، اندھی اور لنگڑی ہو جائے ،سائنس کا انحصار مکمل طور پر غیر سائنس یعنی ریاضی پر ہے۔ جدیدیت پسندوں کو یہ دکھ ہے کہ عصر حاضر میں سائنس کے بغیر اسلام کیسے چل سکے گا؟قا بل غور بات یہ ہے کہ سائنس اپنے اظہار، ترجمانی اور تشریح کے لیے ایک ایسے علم پر منحصر ہے جو سائنس کی نظر میں غیر سائنسی ہے۔ لیکن کیا اس علم کی اہمیت سائنس سے کم تر ہے؟ کسی ایسے علم کو جو سائنس کے منہاج کے مطابق علم نہ ہو یا سائنس جس کے بارے میں کچھ بتانے سے قاصر ہو اسے غیرعلمی اور غیر حقیقی سمجھنا خودغیر علمی رویہ ہے۔ خاص طور پر اس وقت جب کہ عصر حاضر کا ایک بڑا سائنس داںخود یہ کہتا ہے کہ محبت سائنس نہیں تو اس کا مطلب یہ نہیں کہ یہ خراب چیز، بری شے یا غلط ہے۔

سائنسی نتائج حتمیت و قطعیت سے خالی ہوتے ہیں:

            سائنس مادی نتائج تک رسائی پاسکتی ہے لیکن یہ نتائج بھی قطعاً غیر قطعی و غیر حتمی اور صرف اندازے ہوتے ہیں۔ مادی نتائج انسان کی روح و جسم اور کائنات پر یقیناً اثر انداز ہوتے ہیں لہٰذا ان کا جائزہ لینا، ان کی تنقیح کرنا مذہب کی ذمّے داری ہے مذہب انسانوں کی عقلی سرگرمیوں اور اس کے حاصلات مادی ایجادات یعنی سائنس اور ٹیکنالوجی کا ناقدانہ جائزہ لینے کے بجائے اس کا غلام بننے کی کوشش کرے تو یہ خطر ناک صورتحال ہوگی۔ مثلاً منبر رسول سے جب کوئی عالم کاروں، جہازوں، اور جدید صنعتی ترقی، صنعتی مصنوعات ریفریجریٹر، ایئرکنڈیشنڈ وغیرہ کی زبردست تعریف کرتا ہے اور مغرب جیسی صنعتی ترقی کی دعائیں عالم اسلام کے لیے مانگتا ہے۔ اس کے فوری بعد اللہ تعالیٰ سے وہ یہ دعا بھی کرتا ہے کہ اے اللہ موسم کی شدت اور حدت سے جو ہمارے گناہوں کی وجہ سے  دن بہ دن بڑھ رہی ہے ہمیں محفوظ رکھ تو اصلاً وہ دو متضاد باتیں کرتا ہے، وہ یہ بھول جاتا ہے کہ موسم کی شدت کا اصل تعلق جدید طرز زندگی، کائنات کے استحصال، تسخیر کائنات کے فلسفے، عیش و عشرت کی ثقافت، اسراف پر مبنی معیشت ، کاربن ڈائی آکسائیڈ  [Co2] کی مسلسل پیداوار، گرین ہائوس گیسنز [Green House Gases]، اورمیتھن [Methane] کا مسلسل اخراج جو دیگر گیسوں سے زیادہ خطرناک گیسیں ہے۔

 

  1. Ibid.,p.47.

آرٹک اور انٹارٹیکا میں جمع ہونے والی یہ تمام خطرناک گیس اب وہاں برف پگھلنے کے باعث خارج ہو کر فضا میں شامل ہو رہی ہیں اور گلوبل وارمنگ میں زبردست اضافہ کر رہی ہیں۔ اس اضافے کا سبب بھی مغرب کی بے ہنگم ،خدا دشمن اور تسخیر فطرت کے نام پر تدفین فطرت کے عمل پر مبنی صنعتی ترقی ہے۔ اس کے نتیجے میں آرٹک اور انٹارٹیکا میں صدیوں سے جمی ہوئی برف کی ہزاروں فٹ تہیں پگھل گئیں۔پینگوئن کی ستر فی صد نسلیں ختم ہوگئیں اور ماحول اور موسم میں اچانک غیر معمولی، بے اندازہ، خطرناک تبدیلیاں جنم لے رہی ہیں۔ abrupt and irreversible climate shifts دنیا کو مزید تیزی سے تباہی کے دہانے کی طرف لے جا رہے ہیں۔ UNسے وابستہ مختلف سائنس دانوں پر مشتمل مجلس IPCC  ] Intergovernmental Panal on Climate Change  [کی رپورٹ کے مطابق:

PARIS, June 18: The world faces a growing risk of “abrupt and irreversible climatic shifts” as fallout from global warming hits faster than expected, according to research by scientists released on 20 June 2009. Global surface and ocean temperatures, sea levels, extreme climate events, and the retreat of Arctic sea ice had all significantly picked up more pace than experts predicted. Only a couple of years ago report said.

            The stark warning comes less than six months before an international conference aiming to seal a treaty to save the planet from the worst ravages of global warming. A 36 page document summarised more than 1400 studies presented at a climate conference in March in Copenhagen,  where a United Nations meeting will be held in December to hammer out a successor to the Kyoto Protocol that expires in 2012. The report said greenhouse gas emissions and other climate indicators are at or near the upper boundaries forecast by the UN Intergovernmental Panel on Climate Change (IPCC), whose 2007 report has been the scientific benchmark for the troubled UN talks.

            There is also new evidence that the planet itself has begun to contribute to global warming through fallout from human activity. Huge stores of gases such as methane an even more powerful green house gas than carbon dioxide, trapped for millennia in the Arctic permafrost may be starting to leak into the atmosphere, speeding up the warming process.

  1. اس خوفناک تباہی کو روکنے اور دنیا کو اس سے بچانے کے بجائے ترقی یافتہ قومیں اور روس و امریکہ اس خطے میں مخفی وسائل پر قبضے کے منصوبے بنا رہے ہیں یہ سوچے بغیر کہ جب یہ دنیا ہی جہنم بن جائے گی تو ان وسائل کو حاصل کر کے یہ اقوام کیا کرسکیں گی؟

            Reuters ایجنسی کے  Alister Doyle کی ٢٢ جون ٢٠٠٩ء کی رپورٹ سے اندازہ ہوتا ہے کہ Arctic Nations کے مابین اور روس امریکہ کے درمیان اس خطے کے وسائل، ذرائع اور ذخائر پر قبضے کے لیے سرد جنگ [Cold War] ہوچکی ہے Artic اور   Antarticaمیں گیس تیل کے ذخائر کی دریافت اور نئے بحری راستوں کی تلاش میں خاموش سرد جنگ رفتہ رفتہ پھیل رہی ہے ٢٠٥٠ تک موجودہ گلوبل وارمنگ کے باعث یہ پورا خطہ برف سے خالی ہو جائے گا۔ Arctic میں 90 بلین ڈالر تیل محفوظ ہے جو دنیا کی تین سال کی ضروریات کے لیے  کافی ہے اس رپورٹ کے انکشافات دنیا کو ایک نئے ماحولیاتی بحران سے آگاہ کرتے ہیں چند اہم حصے درج ذیل ہیں :

ARCTIC nations are promising to avoid new “Cold War” scrambles linked to climate change, but military activity is stirring in a polar region where a thaw may allow oil and gas exploration or new shipping routes.

The six nations around the Arctic Ocean are promising to cooperate on challenges such as overseeing possible new fishing grounds or shipping routes in an area that has been too remote, cold and dark to be of interest throughout recorded history. But global warming is spurring long irrelevant disputes, such as a Russian Danish stand off over

 

  1. AFP DAWN 19, June 2009.

who owns the sea bed under the controls the Northwest passage that the United States calls an international water way. It will be a new ocean in a critical strategic area said Lee. Willett, head of the Marine studies Programme at the Royal United Services Institute for Defence and Security Studies in London.

            Many leading climate experts now say the Arctic Ocean could be ice-free by 2050 in summer, perhaps even earlier, after ice shrank to a record low in September 2007 amid a warming blamed by the UN Climate Panel on human burning of fossil fuels.Previous forecasts had been that it would be ice-free in summers towards the end of the century. Among signs of military concern, a Kremlin document on security in mid May said Russia may face wars on its borders in the near future because of control over energy resources- from the Middle East to the Arctic. Russia, which is reasserting itself after the collapse of the Soviet Union, sent a nuclear submarine in 2008 across the Arctic under the ice to the Pacific. Canada runs a military exercise, Nanook, every year to reinforce sovereignty over its northern territories. Russia faces five NATO members- the United States, Canada, Norway, Iceland and Denmark via Greenland – in the Arctic. In February, candadian Prime Minister Stephen Harper criticised Russia’s “increasingly aggressive” actions after a bomber flew close to Canada before a visit by US President Barack Obama. And last year Norway’s government decided to buy 48 Lockheed Martin F-35 jets at a cost of 18 billion crowns ($2.81 billion), rating them better than rival Swedish Saab’s Gripen at tasks such as surveillance of the vast Arctic north. The US Geological Survey estimated last year that the Arctic holds 90 billion barrels of undiscovered oil- enough to supply current world demand for three years.And Artic shipping routes could be short-cuts Atlantic Oceans in summer even though uncertainties over factors such as ice bergs, insurance costs or a need for hardened hulls are likely to put off many companies. “The Arctic area would be of interest in 50 or 100 years- not now”, said Lars Kullerud, President of the University of the Arctic. “It’s hype to talk of a Cold War.”

  1. اللہ تعالیٰ سے جدید صنعتی ترقی اور ایئرکنڈیشنڈ ،کاروں، موبائل فون، کو اس ترقی کے فطری  اورحقیقی مظاہر ولوازم اور ثمرات سمجھ کر طلب کرنے والا جوآج کل فریج کو ضروریات زندگی میں داخل سمجھتا ہے، دعا مانگتے ہوئے یہ کیوں بھول جاتا ہے کہ ریفریجریٹر اور ایئر کنڈیشنڈ کے ذریعے فضا میں CFC [Chloroflurocarbons] کی دو سو سال تک مسلسل پھیلنے والی آلودگی نے اوزون [Ozone] کی اس لہر کو توڑ دیا ہے جو پوری دنیا کو سورج کی خطرناک شدت وحدت سے بچاتی تھی۔ دو صدیوں تک چند فی صد امیر لوگوں نے ایئرکنڈیشنڈ سے مصنوعی ٹھنڈک کے مزے اٹھائے اور پوری دنیا کی اکثریت کو خطرناک گرم موسموں کے سپرد کر دیا۔ نہ صرف غریب لوگ بلکہ اب خود یہ امیرا بھی اس خطرناک گرمی سے پریشان ہیں۔ برف پگھل رہی ہے پانی کی سطح بلند ہو رہی ہے، اس صدی کے نصف تک ہزاروں شہر ڈوب جائیں گے، پانی کی قلت پیدا ہوگی اور تیسری عالمگیر جنگ پانی کے حصول کے لیے لڑی جائے گی۔ وہ یہ بھول جاتا ہے کہ ماحول میں شدید گرمی کے اہم اسباب میں جدید صنعتوں، ان کے فاضل زہریلے مادوں، عالمگیر جنگوں، جنگوں میں مغرب کی جانب سے استعمال کیے جانے والے خطرناک ترین تابکار مادوں کا کتنا اثر شامل ہے۔ وہ مغرب کو تباہ کرنے کے لیے عالم اسلام کو جوہری صلاحیت حاصل کرنے کی دعائیں بھی کرتا ہے۔عجیب بات ہے کہ انسان فطرت دشمن اپنی عقلی سرگرمی سے Global Warming پیدا کرے اور خدا سے اس حدت گرمی اور موسم کی تبدیلی کی دعا کرے تو وہ ایک غیر عقلی، غیر علمی، غیر دینی سرگرمی میں نادانستہ طور پر مصروف عمل ہے۔ ہمارے اکثر جدیدیت پسند دعا کرتے ہوئے ان تمام حقائق سے سہو نظر کرتے ہیں کیونکہ وہ چیزوں کی اصل حقیقت سے ناواقف ہیں وہ سائنس کی ایجادات کے اس ظاہر اور اس کے عارضی فوائد پر نثار ہوچکے ہیں۔

            اس عہد کا المیہ یہ ہے کہ ہر فرد اپنی انفرادی لذت اور ذاتی جنت[personal paradise]  کی تعمیر و تشکیل و تخلیق کے لیے اس دنیا کو اجتماعی جہنم [collective hell] میں

  1. Reuters, 22 June 2009, Dawn 23 June 2009.

تبدیل کر رہا ہے۔ مگرسہولت، آرام، عیش و عشرت ،مزوں، اور لذت سے دستبردار ہونے کے لیے تیار نہیں، لیکن خدا سے چاہتا ہے کہ وہ اس کی غیر فطری سرگرمیوں کے مہلک اثرات سے خود اسے، انسانیت کو اور اس کائنات کو محفوظ کر دے۔ یہ دعا، یہ آرزو، یہ تمنا، یہ امید، یہ التجا اور یہ خواہش اسی قسم کی خواہش ہے جب ایک مجرم نے اپنے ماں باپ کو قتل دینے کے بعدکر عدالت سے اس بنا پر رحم کی اپیل کی کہ وہ یتیم ہے اور قانون میں یتیم کی سزا میں تخفیف کی شق موجود ہے۔ کیا عدالت ایسے شقی مجرم کو اس قانونی موشگافی کے تحت کوئی رعایت دے سکتی ہے؟ جس نے اس بنیاد کو اپنے ہاتھوں سے تہس نہس کر دیا جس کی اساس پر وہ رحم کی التجا کر رہا ہے۔ یہ نقطہ نظر اور طرز حیات دراصل اس اصول کی عکاسی کرتا ہے جس کے تحت اہل عالم زندگی فرعون کی چاہتے ہیں لیکن آخرت حضرت موسیٰ کی۔

ہر تعقل اپنے منہاج علم ہی میں معقول معلوم ہوتا ہے:

            ہر علم کا اپنا منہاج، اپنی مابعد الطبیعیات، ایمانیات اور علمیت ہوتی ہے اور اسی دائرے میں وہ علم اپنا تعقل ثابت کرسکتا ہے۔ اس دائرے سے باہر وہ تعقل اپنا جواز کھو دیتا ہے۔ صرف انبیا کے پاس معروضی علم ہوتا ہے۔ ایسا علم جو آفاقی اور زماں و مکان سے ماورا ہوتا ہے۔ یہ ایسا علم ہے جس کی تصدیق ہر عہد کا انسان اپنے ذہن، عقل، قلب، تجربے ،جذبات اور احساسات کے ساتھ کرسکتا ہے۔ بشرطیکہ وہ خواہشات نفس کی غلامی سے کچھ دیر کے لیے علیحدہ ہوجائے۔ جب آپ ارسطو، نیوٹن یا آئن اسٹائن کے منہاج میں کھڑے ہوں گے تو ہر منہاج کے اپنے دعاوی، اپنے مفروضات، اپنے مسائل، اپنی ایمانیات ہوں گی اور اس حصار کے اندر ہی یہ دعوے آپ کو تعقل سے بھرپور نظر آئیں گے۔ ان علوم سے پیدا ہونے والے مسائل، سوالات، مشکلات بھی انہی علوم سے متعلق دائروں کے اندر حل ہوں گے۔ اس لیے ایک منہاج علم کے اصول کو لے کر دوسرے منہاج علم کے مسئلے حل نہیں کیے جاسکتے نہ سوالات کے جوابات دیے جاسکتے اور نہ ہی غلطیاں درست کی جاسکتی ہیں اگر آپ یہ طریقۂ کار اختیار کریں گے تو اس کے نتیجے میں خطر ناک بحران پیدا ہوں گے خصوصاً مذہب اور سائنس میں تطبیق کی غیر سنجیدہ کو ششوں کے نتیجے میں نقصان مذہب کو پہنچے گا جیسا کہ مسئلہ حرکت زمین کی تاریخ سے معلوم ہوتا ہے کہ اس سائنسی نظریے نے عیسائیت کی بنیادوں کو ہلا کر رکھ دیا اور آج تک عیسائیت اپنے پیروں پر دوبارہ کھڑی نہ ہو سکی، عیسائیت اور یونانی سائنس کی تطبیق نے عیسائیت کو لحد میں اتاردیا اور جدیدیت پسند بیسویں صدی میں دنیا کو سائنس اور مذہب کی تطبیق کا مسترد شدہ طریقہ بتارہے ہیں جس سے واضح ہو جاتا ہے کہ یہ حضرات تاریخ ِ مذہب اور تاریخِ سائنس سے بہ خوبی واقف نہیں۔

مذہب اور سائنس دو مختلف منہاج علم:

            مذہب اور سائنس دو مختلف علم اور دو مختلف دائرے ہیں ایک اقلیم اور ایک منہاج کے دلائل سے دوسری اقلیم دوسرے منہاج کے مسائل حل کرنے کا رویہ مذہب، فلسفہ اور سائنس کی دنیا میں  غیر علمی رویہ ہے۔ نیوٹن کی طبیعیات کے مسئلے آئن اسٹائن کی طبیعیات سے حل نہیں ہوسکتے۔ اسی طرح اسلامی منہاج علم میں پیدا ہونے والے سوالات کے جوابات اسلامی علمیت اور اس کا تعقل دے گا۔ اگر اس تعقل اور علمیت کے وارث اتنے کمزور ہیں کہ ان سوالات اعتراضات ، شبہات اور اشکالات کا جواب نہیں دے سکتے تو اس منہاج علم کے] ماخذ علم[  ]hard core [سوالیہ نشان بن جائیں گے، جب اسلامی منہاج میں اٹھنے والے سوال، اعتراض، شبہ اور شکوک کا جواب آپ کے منہاج علم میں میسر نہیں وہ کسی دوسرے منہاج علم سے لایا جا رہا ہے تو برتری، فوقیت اور عظمت آپ کی نہیں دوسرے منہاج علم کی ہوگی۔ اگر اسلام کو طاقت ور بنانے اور دعوتِ دین کے لیے انبیاء کے طریقے کو ترک کر کے سائنس کو استعمال کیاجائے تو اس میں یہ یقین محذوف ہوتاہے کہ انبیا کا طریقہ کم از کم عصر حاضر میں غیر موثر ہے لہٰذا اس کے نتیجے میں فوقیت اور برتری سائنس کی ثابت ہوتی ہے دین کی نہیں، مسئلہ یہ ہے کہ نقلی دلائل اسی وقت قابل قبول ہوتے ہیں جب ان دلائل کے پیش کرنے والے کی اخلاقی فضیلت اور روحانیت کرشماتی ہو، ان کی زندگی کا رخ خدا مرکز ہو ،وہ حیات دنیا کے طالب نہ ہوں بلکہ طالب آخرت ہوں ، چونکہ دنیا میںہر فرد دنیا چاہتا ہے اور دنیا کی طلب، آرزو، خواہش کسی نہ کسی سطح پر رکھتا ہے لیکن جب کسی ایسے شخص کو دیکھتا ہے جو ان دیکھی آخرت اور ان دیکھے خدا پر ایمان لا کر اُس دنیا کی طلب میںاِس دنیا کو قابل ترجیح نہیں سمجھتا تو یہ عملی دلیل فکری نظری اور نقلی دلیل کے فہمِ عقلی کو ممکن بنادیتی ہے۔  ایک شخص طالب آخرت ہو لیکن دنیا میں بھی اس طرح منہمک ہو جس طرح اہل دنیا تو یہ رویہ لوگوں کو نہ عقلی طور پر متاثر کرتاہے نہ نقلی طور پر، جب اہل دنیا یہ دیکھتے ہیں کہ آخرت اور جنت کی طرف بلانے والے نفوس قدسیہ، ما شاء اللہ ،خود ان سے زیادہ دنیا دار، طالب حیات دنیا، دنیا کی لذتوں میں منہمک ہیں تو ان کا ذہن، عقل ،قلب اور طبیعیت مذہبی دعووں کو قبول نہیں کرتی۔ علما انبیاء کے وارث ہیں لہٰذا ان کا کردار بھی انبیا کی طرح ہو نا چاہیے اگر یہ کردار اس درجے کا نہیںہوگا  تو دینِ اسلام عقل، سائنس اور فلسفے کے ذریعے بھی ذہن انسان کے لیے کبھی قابل قبول نہیں ہوگا۔ مذہب [religion]کا طریقہ علم، یقین، ایمان، عملِ صالح ہے۔ مذہبِ سائنس [Religion of Science] کا طریقہ ما بعد الطبیعیات، اندازے، مفروضات ، تجربات اور  مشاہدات ہیں۔ جو ہر نئے تجربے اور نظریے کے ساتھ بدلتے رہتے ہیں۔ مذہبِ فلسفہ [Religion of Philosophy] کا طریقہ عقل کی برتری شک کی رفعت اور تشکیک سے شروع ہوتا ہے اور اسی پر ختم ہو تا ہے تینوں مذاہب کے اصول الگ الگ ہیں۔

سائنس: ایک منہاج سے دوسرے میں منتقلی ایک مذہب سے دوسرا مذہب قبول کرنے کی طرح ہے: کوہن

            جس طرح ایک مذہب کی علمیت کے ذریعے دوسرے مذہب کے مسائل کا حل تلاش نہیں کیا جاسکتا بالکل اسی طرح سائنس کے ایک منہاج سے دوسرے منہاج میں آمد محض واقعہ، حادثہ، کھیل تماشہ نہیں ہے۔ کوہن[T.S Kuhn] کے الفاظ میں سائنس کے ایک منہاج سے دوسرے منہاج میں آنے کی کوئی عقلی دلیل نہیں دی جاسکتی۔ دوسرے لفظوں میں یہ تبدیلی و تغیر بالکل اسی طرح ہے جس طرح کوئی شخص ایک مذہب چھوڑ کر دوسرے مذہب کو اختیار کرے۔ ١   

 

  ١  تفصیل کے لیے ملاحظہ فرمایئے:

Thomas Kuhn, The Structure of Scientific Revolutions, Chicago: Chicago University Press,1970,pp.154, 200.

            کوہن Structuralist ہے مگر وہ Relativist بھی ہے ،اس کے برعکس لے کاٹو ش جو اسٹرکچرلسٹ ہے لیکن اس کا شمار Objectivist میں ہوتا ہے، کوہن کے نقطۂ نظر سے اتفاق نہیںکرتا اس کے خیال میں ایک منہاج سے دوسرے منہاج میں منتقلی کی عقلی بنیادیں ہوتی ہے، وہ عقل کو معروضی علم کے حصول کا ذریعہ سمجھتا ہے اس کے خیال میں جو سائنسی منہاج علم زیادہ مسئلے حل کرنے کے قابل ہوگا وہی منہاج علم کامیاب رہے گا۔ اور لوگ اسی بنیاد پر ایک منہاج کو ترک کرکے دوسرے میں چلے جاتے ہیں۔ اس کے خیال میں سائنسی ڈھانچے [scientific structure] بنتے بگڑتے رہتے ہیں، جو ڈھانچے زندہ [generate] ہوتے ہیں وہ اکثر مسائل حل کردیتے ہیں جو ڈھانچے زندگی سے محروم [De generate] ہوتے ہیں ان کے مآخذ علم مناہج آخر کار متاثر ہو جاتے ہیں اور وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ سائنسی ڈھانچے مسائل کے حل میں غیر موثر ہو جاتے ہیں، سائنسی ڈھانچوں کے بننے بگڑنے کی حرکیات [Dynamics of Generation & Degeneration of Scienctific

Structures]کے تحت لوگ سائنس کے ایک منہاج کو ترک کر کے دوسرا اختیارکرلیتے ہیں، لیکن سائنس دانوں کی بہت بڑی اکثریت جو سائنس اور عقل کو ایک معروضی و آفاقی علم نہیں سمجھتی لے کا ٹوش کے نقطۂ نظر سے اتفاق نہیں کرتی۔ مغرب کے تمام بڑے فلاسفہ سائنس کی آفاقیت اور معروضیت [Objectivity & Universality of Science] کے قائل نہیں ہیں وہ اسے ایک خاص تاریخ تہذیب، ثقافت، عقلیت اور حالات کی پیداوار سمجھتے ہیں۔

سائنسی دعوے کا موازنہ غیر سائنسی دعوے سے کرنا ممکن نہیں: فیرابینڈ :

            [P.K. Feyerabend] ایک اہم بات کرتا ہے جو ذاکر نائیک صاحب کی نظر سے یقینا نہیں گزری، وہ کہتا ہے کہ کسی بھی سائنسی دعوے [scientific claim] کا موازنہ و مقابلہ کسی غیر سائنسی دعوے [non scientific claim] سے نہیں کیا جاسکتا۔ ایسے عمل کو وہ Idea of Incommensurable کہتا ہے۔ یعنی ایک منہاج علم میں اٹھائے گئے مسائل کا حل دوسرے منہاج علم کے طریقوں میں تلاش نہیں کیا جاسکتا ۔ ١ 

صرف سائنس کو علم سمجھنا دانش مندی نہیں:  فیر ابینڈ:

            فیرابینڈ[Feyerabend] کو انارکسٹ مکتب فکر کا ترجمان سمجھا جاتا ہے، وہ پس   جدیدیت فلسفے [Postmodern Philosophy] سے تعلق رکھتا ہے ،وہ یہ سوال اٹھاتا ہے کہ دو چیزوں کے مابین موازنے اور تقابل کے لیے  ضروری ہے کہ ان اشیا کی بنیادوں میں مطابقت پائی

   ١     فیرابینڈ کا یہ موقف درج ذیل مضمون اور کتاب کے متعلقہ صفحات پر تفصیل سے پڑھا جاسکتا ہے:

  1. Ray [ed.],Distinction Between Crank & Responsible Man Realism and Instrumentalism Comments on the Logic of Factual Support in the Critical Approach to Science and Philosophy, NY: Free Press, 1964, p.305.

جائے ،اگر ان چیزوں کی بنیادیں مختلف ہوں تو ان کا تقابل نہیں ہوسکتا دوسرے لفظوں میں ان اشیا یا نظریات یا ڈھانچوں کے Meta Ethical Narrative یا  Grand narvatives یکساں ہوں تو اشیا کے نظریات وغیرہ کا تقابل ممکن ہے ،مثلاً انسان کو اگر سائیکو کیمیکل آرگن کے طور پرتقابل کے لیے  Physicilist اور Dualisticمکتب فکر میں جانچا جائے تو یہ ممکن نہیں کیوں کہ فزیکلسٹ سبب [Cause] اور اثر[Effect] کے مابین تعلق کو طبیعی [Physical] سمجھتے ہیں اور Dualistic انسان کو ذہن و جسم کا مجموعہ سمجھتے ہیں ،جو ایک دوسرے کو متاثر کرتے ہیں لہٰذا ان دونوں مکاتب فکر کے Grand Narvatives الگ ہیں لہٰذا ان دو مختلف مناہج میں انسان کے تصورات کا تقابلی مطالعہ ممکن نہیں۔ اسی طرح مذہب اور جادو کا سائنس سے موازنہ و تقابل درست نہیں فیر ابینڈ کے خیال میں آج کی دنیا میں سائنس ہر ریاست کا اہم ترین موضوع بن گیا ہے لہٰذا دنیا بھر میں سائنس کی بے پناہ اور روز افزوں ریاستی سرپرستی کے باعث اس کی شب و روز ترقی کو معروضیت کے دائرے میں علمیت کا پیمانہ سمجھ لیا گیا ہے، جو چیز سائنٹفک طریقے سے اپنے علم اور دلیل کا اظہار نہ کرے اسے لوگ سرے سے علم ہی نہیں مانتے اور اگر علم مان لیتے ہیں تواسے قابل قدر نہیں مانتے، اس غیر علمی، یک رخے اور غیر معقول رویے کے باعث دنیا خوفناک ترین علمی یکسانیت کی جانب بڑھ رہی ہے جس کے نتیجے میں وہ لمحہ آجائے گا جب دنیا میں حقیقت کو پہچاننے کا کوئی دوسرا متبادل طریقہ باقی نہ رہے گا صرف سائنسی ذریعۂ علم ہی حقیقت کی پہچان اور شناخت اور تصور کا واحد طریقہ بن جائے گا، جبکہ حقیقت میں سائنسی علم حقیقت کو پہچاننے کا واحد طریقہ قطعا ً نہیںہے اس میں ہمہ وقت امکان کذب و تردید موجود ہے۔ فیرابنیڈ کا خیال ہے کہ حقیقت کو جاننے کے جتنے بھی علمی طریقے ہیں ان سب کو زندہ رہنا چاہیے نہ کہ صرف سائنسی ذریعۂ علم کو ترجیح دے کر تمام ذرائع علم کو مسترد کیا جائے، کیونکہ اس رویے کا صرف ایک ہی مطلب ہوگا کہ سائنس کو علم ماننے والے اس بات کا دعوی کردیں کہ وہ سچ [Truth] کو پہچان گئے ہیں جبکہ حقیقت [Reality] اور سچ [Truth] کو علمی طور پر نہ جانا جاسکتا نہ ثابت کیا جاسکتا۔ جب سچ اور حقیقت ثابت نہیں ہوسکتے تو ایک ہی قسم کے علم یا تصور یا سچ کے نظریے کو دنیا پر جبراً مسلط کرنا غیر علمی رویہ ہے، اس رویے، جبر اور تسلط کے نتیجے میں انسان کی آزادی اور خود مختاری متاثر ہوگی دنیا میں موجود بو قلمونی، تنوع اور رنگارنگی [Diversity] کا خاتمہ ہو جائے گا۔

دو مختلف مناہج کو ملا کر نتائج اخذ کرنا غیر سائنسی رویہ ہے:

            فیرابنیڈ کے بتائے گئے سائنسی طریقے کے مطابق سائنسی تناظر کی روشنی میں قرآنی آیات کا سائنسی تحقیقات و نتائج سے تقابل یا سائنسی تحقیقات کا قرآنی آیات سے تقابل، قرآن کا سائنس کی روشنی میں جائزہ یا سائنس کا قرآن کی روشنی میں جائزہ خود سائنس کی نظر میں ایک غیر علمی، غیر عقلی اور غیر منطقی رویہ ہے۔ کیونکہ دونوں اقالیم کی مابعدالطبیعیات، ان کو سمجھنے کی علمیت، نتائج اخذ کرنے کے طریقے اور مناہج بالکل مختلف ہیں۔ چونکہ ہر دعویٰ اپنی علمیت کی بنیاد پرصرف اور صرف اپنے منہاج علم ہی میں پرکھا جاسکتا ہے۔ نیوٹن اور آئن اسٹائن کی فزکس بہ ظاہر فزکس ہے لیکن دونوں کے اصول، منہاج، فلسفہ اور مابعدالطبیعیات مختلف ہیں نیوٹن کے اصولوں کی روشنی میں آئن اسٹائن کی فزکس کا مطالعہ باطل مطالعہ ہوگا ہومیوپیتھی، ایلوپیتھی، یونانی طب کے اصول الگ ہیں ان کا فارماکوپیا اور مابعدالطبیعیات بھی الگ ہے، ان کا مطالعہ ان کے اپنے منہاج علم میں ہوسکتاہے تینوں کو خلط ملط نہیں کیا جاسکتا یہ خالصتاً غیر سائنسی رویہ ہوگا۔ اسی لیے ایلوپیتھک طریقہ علاج سے کوئی مریض اپنی جراحی کرائے تو عمل جراحی سے پہلے اس کے دوران اور اختتام کے بعد وہ ہومیوپیتھی یا حکمت کی دوا استعمال نہیں کرسکتا اگر ایسا کیا جائے تو اس کی جان کے اتلاف کا ذمہ دار وہ خود ہوگا۔ کوئی ایلوپیتھ سرجن آپ کو دوسرے فارما کوپیا کی ادویات استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے گا۔ جب آپ ایلوپیتھی طریقۂ علاج اختیار کرتے ہیں تو آپ کو اسی طریقے کی ادویات استعمال کرنا ہوں گی۔ پاکستان میں جراحت قلب ]اوپن ہارٹ سرجری[ کے دوران کئی اموات صرف اسی باعث واقع ہوئیں کہ مریض کا خون آپریشن کے بعد نہیں رک سکا بلکہ بہتا رہا۔ خون جمنے کی صلاحیت مریض کے جسم میں کیوں مفقود ہوئی؟ تحقیق پر معلوم ہوا کہ مریض خون پتلا کرنے کے لیے ہومیوپیتھک ادویات استعمال کرتے تھے اور اسی دوران آپریشن کرالیا گیا۔ لہٰذا نائیک صاحب مذہب اور سائنس کے مختلف اور متضاد منہاج سے ان کا تقابلی مطالعہ نہیں کرسکتے یہ غیر علمی رویہ ہے۔

             حقیقت الحقائق اللہ ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ، اللہ کے پیغمبر ہیں، دنیا میں ہزاروں پیغمبر آئے، پیغمبروں کے واقعات ان کی جدوجہد، ایمانیات، اعتقادات، اعمال، حشر و نشر، عذاب قبر، جنت و دوزخ، فرشتے، محسوسات، جذبات سے متعلق قرآن کی ہزاروںآیات کی تشریح و تصدیق سائنسی منہاج میں ممکن ہی نہیں جو ایسا سمجھتا ہے وہ یا تو سائنس سے ناواقف ہے یا قرآن سے واقف نہیں۔ کوئی سائنس داں رسولۖ کے دعویٰ رسالت کو کبھی سائنسی منہاج تسلیم نہیں کرے گا۔ کیونکہ وہ سائنسی منہاج علم میں ثابت ہی نہیں کیا جاسکتا۔ یعنی رسالت مآبۖ نے جس ذریعے  سے وحی کا علم حاصل کیا اسی ذریعے اور اسی طریقے سے کوئی دوسرا شخص وحی کا نہ تجربہ کرسکتا ہے اور نہ علم حاصل کرسکتا۔ یہ تجربہ ہر جگہ ہر شخص کے لیے ممکن ہی نہیں ہے۔ اس تجربے اور علم میں کذب کا امکان بھی موجود نہیں ہے۔ اس کی تردید بھی نہیں کی جاسکتی۔ اس کو سائنسی تجربہ گاہ میں آزمایا نہیں جاسکتا۔ یہ علم نقل سے حاصل ہوا ہے لہٰذا سائنس اس علم کو علم ہی تسلیم نہیں کرتی وہ اسے ایک موضوعی [Subjective] معاملہ قرار دے کر اسے سائنسی علم کی دنیا سے خارج کر دیتی ہے۔

سائنس کی حقیقت: فائین مین کی زبانی :

            سائنس کیا ہے؟ اور اس کی حقیقت و ماہیت کیا ہے؟ذیل میں اس سے متعلق اس صدی کے سب سے بڑے سائنس داں فائن مین Richard Feynman [1918-1988]کی کتاب The Character of Physical Law [MIT Press] میں شامل ایک اہم مضمون “Seeking New Laws of Nature” کے منتخب اقتبا سات پیش کیے جار ہے ہیں، اس کی زبان نہایت آسان ہے اور شہادت اس صدی کے آئن اسٹائن کی ہے واضح رہے کہ عظیم سائنس داں اور مفکر فائن مین نے ١٩٤٥ء میں امریکن آرمی میں شمولیت کی کوشش کی تو اسے دماغی طور پر نا اہل [Mentally deficient for service] کہہ کر باہر نکال دیا گیا تھا،فائن مین اپنے مضمون میں فطرت کے نئے قوانین کے بارے میں بتاتا ہے:

            What I want to talk about in this lecture is not, strictly speaking, the character of physical law. One might imagine at least that one is talking about nature when one is talking about the character of physical law; but I do not want to talk about nature, but rather about how we stand relative to nature now. I want to tell you . . . what there is to guess, and how one goes about guessing. Someone suggested that it would be ideal if, as I went along, I would slowly explain how to guess a law, and then end by creating a new law for you. I do not know whether I shall be able to do that. . . .In general we look for a new law by the following process. First we guess it. Then we compute the consequences of the guess to see what would be implied if this law that we guessed is right. Then we compare the result of the computation to nature with experiment or experience, compare it directly with observation, to see if it works. If it disagrees with experiment it is wrong. In that simple statement is the key to science. It does not make any difference how beautiful your guess is. It does not make any difference how smart you are, who made the guess, or what his name is- if it disagrees with experiment it is wrong. That is all there is to it. It is true that one has to check a little to make sure that it is wrong, because whoever did the experiment may have reported incorrectly, or there may have been some feature in the experiment that was not noticed, some dirt or something; or the man who computed the consequences, even though it may have been the one who made the guesses, could have made some mistake in the analysis. These are obvious remarks, so when I say if it disagrees with experiment it is wrong, I mean after the experiment has been checked, the calculations have been checked, and the thing has been rubbed back and forth a few times to make sure that the consequences are logical consequences from the guess, and that in fact it disagrees with a very carefully checked experiment.

            You can see, of course, that with this method we can attempt to disprove any definite theory. If we have a definite theory, a real guess, from which we can conveniently compute – consequences which can be compared with experiment, then in principle we can get rid of any theory. There is always the possibility of proving any definite theory wrong; but notice that we can never prove it right. Suppose that you invent a good guess, calculate the consequences, and discover every time that the consequences you have calculated agree with experiment. The theory is then right? No, it is simply not proved wrong. In the future you could compute a wider range of consequences, there could be a wider range of experiments; and you might then discover that the thing is wrong. That is why laws like Newton’s laws for the motion of planets last such a long time. He guessed the law of gravitation, calculated all kinds of consequences for the system and so on, compared them with experiment and it took: several hundred years before the slight error of the motion of Mercury was observed.

            During all that time the theory had not been proved wrong. and could be taken temporarily to be right. But it could never be proved right, because tomorrow’s experiment might succeed in proving wrong what you thought was right. We never are definitely right. we can only be sure we are wrong.

            Another thing I must point out is that you cannot prove a vague theory wrong. If the guess that you make is poorly expressed and rather vague, and the method that you use for figuring out the consequences is a little vague-you are not sure, and you say, “I think everything’s right because its all due to so and so, and such and such do this and that more or less, and I can sort of explain how this works. . . ,” then you see that this theory is good, because it cannot be proved wrong! Also if the process of computing the consequences is indefinite, then with a little skill any experimental results can be made to look like the expected consequences. You are probably familiar with that in other fields. “A” hates his mother. The reason is, of course, because she did not caress him or love him enough when he was a child. But if you investigate you find out that as a matter of fact she did love him very much, and everything was all right. Well then, it was because she was over-indulgent when he was a child! By having a vague theory it is possible to get either result. The cure for this one is the following. If it were possible to state exactly, ahead of time, how much love is not enough, and how much love is over-indulgent, then there would be a perfectly legitimate theory against which you could make tests. It is usually said when this is pointed out, “When you are dealing with psychological matters things can’t be defined so precisely.” Yes, but then you cannot claim to know anything about it.

            You will be horrified to hear that we have examples in physics of exactly the same kind. We have these approximate symmetries, which work something like this. You have an approximate symmetry, so you calculate a set of consequences supposing it to be perfect.

            When compared with experiment, it does not agree. Of course-the symmetry you are supposed to expect is approximate, so if the agreement is pretty good you say, “Nice!,” while if the agreement is very poor you say, “Well, this particular thing must be especially sensitive to the failure of the symmetry.” Now you may laugh, but we have to make progress in that way. When a subject is first new, and these particles are new to us, this jockeying around, this “feeling” way of guessing at the results, is the beginning of any science. The same thing is true of the symmetry proposition in physics as is true of psychology, so do not laugh too hard. It is necessary in the beginning to be very careful. It is easy to fall into the deep end by this kind of vague theory. It is hard, to prove it wrong, and it takes a certain skill and experience not to walk off the plank in the game. . . .

            What of the future of this adventure? What will happen ultimately? We are going along guessing the laws; how many laws are we going to have to guess? I do not know. Some of my colleagues say that this fundamental aspect of our science will go on; but I think there will certainly not be perpetual novelty, say for a thousand years. This thing cannot keep on going so that we are always going to discover more and more new laws. If we do, it will become boring that there are so many levels one underneath the other. It seems to me that -what can happen in the future is either that all the laws become known-that is, if you had enough laws you could compute consequences and they would always agree with experiment, which would be the end of the line or it may happen that the experiments get harder and harder to make, more and more expensive, so you get 99.9 per cent of the phenomena, but there is always some phenomenon which has just been discovered, which is very hard to measure, and which disagrees; and as soon as you have the explanation of that one there is always another one, and it gets slower and slower and more and more uninteresting. That is another way it may end. But I think it has to end in one way or another.

1. لے کاٹوش کا نظریہ: دفاع سائنس کا متکلمانہ حصار:

            لے کاٹوش کا  Refutable Protective Belt کا نظریہ سائنس کے دفاع کا اہم نظریہ ہے، اس طریقہ کار کو کسی بھی سائنسی نظریے سے پیدا ہونے والے مسائل کے دفاع کے لیے اس طرح استعمال کیا جاتا ہے کہ سائنسی نظریے کی ایک ایسی علمی و عملی اورعقلی و نظری توضیح ،توجیہہ و تشریح ممکن ہوجاتی ہے جو اس نظریے میں پیدا ہونے والی خامیوں اور در آنے والے تضادات کا ازالہ یا امالہ کر کے اصل نظریے کو محفوظ کر دیتی ہے اور اس نظریے کی خامیوں کو اسی نظریے کے منہاج علم میں رفع کر دیتی ہے ،یعنی نظریے پر اعتراضات یا اس میں موجود خامیوں کو دور کرنے کا نظام قوت و عمل اسی نظریے کے منہاج کے اندر مہیا کیا جاتا ہے۔ لے کاٹوش کے خیال میں  پاپر کے نظریہ تردیدیت  سے کسی نظریے کو مکمل طو ر پر رد نہیں کیا جاسکتا،کسی نظریے کو رد کرنے کے لیے  اسے کئی سطحوں پر جانچنا اور پرکھنا ہوگا  صرف ایک دو تجربوں سے رد کرنے کا طریقہ ٹھیک نہیں، لے کاٹوش مذہب سائنس [Religion of Science] کا زبردست دفاع کرتا ہے، سائنسی نظریات پر اٹھنے والے اعتراضات، شبہات اور سوالات کا وہ سائنس کے منہاج میں زبردست دفاع کرتا ہے، اس دفاع کے لیے  وہ نہ صرف دلیلیں لاتا ہے بلکہ علم کلام سے

 

  1. Richird Feynman, The Character of Physical Law. MIT Press

بھی کام لیتا ہے اور شکست پر شکست کھانے کے باوجود سائنسی نظریے پر ایمان، یقین اور اعتقاد سے دستبردار نہیں ہوتا، اس کے ایمان کا مشاہدہ کرنے کے لیے اس کے دلائل کا مطالعہ ضروری ہے۔ جس سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ تجربات کی روشنی میں سائنسی نظریے کی تردیدہونے کے باوجود سائنس داں اپنے نظریے سے دستبردار نہیں ہوتے، سائنس دان اپنے مفروضات اور نظریات کو ایمانیات کا درجہ دیتے ہیں۔ اس ایمان کے تحفظ، یعنی اپنے نظریے کو درست ثابت کرنے، کے لیے ” کتاب الحیل” سے کام لیتے ہیں اور اپنے نظریے کی ہر خامی کی کوئی ایسی علمی توجیہہ بیان کرتے ہیں جس کے ذریعے اس نظریے کی حقانیت ثابت ہوتی رہے۔ سائنس کے بارے میں عموماً مسلمانوں کے تمام جدیدیت پسند مفکرین کی متفق علیہ لیکن قطعی غلط، بے بنیاد اور غیر علمی رائے یہ ہے کہ سائنس کوئی غیر متنازعہ، نہایت واضح، نور کی طرح روشن دو اور دو چار کی طرح نظر آنے والا ثابت شدہ، تجرباتی سطح پر سو فی صد آزمودہ، ٹھوس، قطعی، حقیقی، سچا، غیر متبدل، حتمی، آخری، فنا سے عاری اور درست علم [absolute knowledge] ہے ،وہ اسے آکسیجن اور ہائیڈروجن کے ملاپ کے نتیجے میں لازماً پانی بن جانے کی طرح کا ایک عمل سمجھتے ہیں، جب کہ پانی اللہ تعالیٰ نے تخلیق کیا انسان نے صرف یہ معلوم کیا کہ پانی کیسے بنتا ہے، سائنس کے مختلف بڑے نظریات اور اصول مختلف قیاسات ، مفروضات ، اندازوں، تیرتکوں، وجدان اور اتفاقی حادثات کے نتیجے میں جنم لیتے ہیں، کئی بار ایسا ہو تاہے کہ نظریہ وجدانی سطح پر پیش کردیا جاتا ہے جو بالکل درست ہوتا ہے لیکن اس کو تجرباتی سطح یا عملی طور پر ثابت کرنے میں دوسواورتین سو سال لگ جاتے ہیں، مثلاً کاپرنیکس کا نظریہ کہ زمین متحرک ہے سورج چاند ساکن ہیں۔ پھر یہ خیال کہ سائنس اس قدر حسابی اور کتابی ہے کہ ایک ہندسے کے بدل جانے سے پورے نتائج بدل جاتے ہیں یہ بھی محض مفروضہ ہے، ایک سو برس تک Pluto کو نظام شمسی کا نواں سیارہ [Planet] قرار دیا گیا ، تمام طلبا اور سائنس داں سو سال تک یہی پڑھتے رہے، علم فلکیات کے ماہرین فلکیات خلائے بسیط ، فضائے محیط، عالم افلاک، نظام سیارگان اور کہکشائوں کے سلسلے کے تمام حساب کتاب ، مساواتیں، جمع ضرب تفریق تقسیم نو ]٩[ کے ہندسے سے کرتے رہے لیکن سن دو ہزار سات میں دنیا بھر کے تمام سائنس دانوں نے اتفاق رائے سے کہہ دیا کہ Pluto نواں سیارہ نہیںہے، لہٰذا سیارے صرف آٹھ رہ گئے۔ ٢٠٠٩ء میں کپلر دور بین کو خلاء میں بھیجا گیا تو اس نے پانچ نئے سیارے دریافت کر لیے جو بڑے بڑے سیاروں سے بھی بڑے ہیں۔ گزشتہ ایک صدی میں جب فلکیا ت کا تمام حساب کتاب ٩ کے ہندسے کے تحت ہورہا تھا۔ جب کہ یہ حساب غلط تھا اصلاً یہ حساب کتاب تیرہ کے ہندسے سے ہونا چاہیے تھا لیکن غلط ترین حسابات کے باوجود اس صدی میں محیر العقول ترقی ہوئی، سیٹلائٹ، وغیرہ اسی صدی میں بھیجے گئے، خلاء میں سائنسی تحقیقات کا انبار آیا خلائی شٹل، ہبل کی دوربین، چاند پر انسان کا اترنا، سب کچھ اسی صدی میںہوا اور اسی صدی میں ماہر فلکیات تمام حسابات غلط کرتے رہے، لیکن ترقی کا پہیہ بھی رواں دواں رہا، اس سے معلوم ہوا کہ سائنس غلطی کے ساتھ بھی کام کرتی رہتی ہے یہ کام چلانے کا ایک طریقہ ہے، چونکہ کام چلتا رہتا ہے لہٰذا ہمیں یہ بہت اچھی لگتی ہے، لیکن اس میں سچائی ، حقیقت  اور درستگی کا عنصر کتنا ہے یہ خود سائنس دانوں کو نہیں معلوم، وہ کہتے ہیں بس It works چونکہ تلاش حقیقت [discovery of reality] اٹھارہویں صدی کے بعد سائنس کا مسئلہ ہی نہیں رہا لہٰذا حقیقت کی تلاش جب ہدف ہی نہیں ہے تو طریقہ کار کی سو فی صد درستگی بھی مسئلہ نہیں ہے ، چونکہ سائنس اٹکل پچو طریقے سے کام کرتی ہے لہٰذا سائنس داں اس کا دفاع بھی اسی اٹکل،پچو طریقے سے کر لیتے ہیں اس ضمن میں   Lakatos Imre نے ایک عمدہ مثال بیان کی ہے  جس کا خلاصہ درج ذیل ہے :

            ”ایک سائنس داں کسی سیارے کے مدار کے بارے میں نیوٹن کے نظریۂ کشش ثقل کے تحت مطالعہ کرنا چاہتا ہے۔ فرض کریں کہ اس سیارے کے مشاہدہ کرنے پر یہ معلوم ہوتا ہے کہ وہ نظریے کے بتائے ہوئے مدار پر سفر نہیں کر رہا۔ کیا وہ اس سے یہ نتیجہ نکالے گا کہ نیوٹن کا نظریہ کشش ثقل غلط ہے؟ ہرگز نہیں بلکہ وہ یہ کہے گا اس سیارے کے نزدیک اب کوئی نامعلوم سیارہ موجود ہوگا جس کی کشش کی وجہ سے زیر مطالعہ سیارہ اپنے مدار سے ہٹ کر سفر کر رہا ہے۔ چنانچہ وہ اس نامعلوم سیارے کے وزن، حجم اور مدار کے بارے میں حساب و تخمینہ لگاتا ہے اور پھر اپنے ساتھی سائنس دانوں کو اس نامعلوم سیارے کے مشاہدہ کا کام سپرد کرتا ہے۔ ہوسکتا ہے کہ نامعلوم سیارہ اتنا چھوٹا ہو کہ اب تک کی طاقتور ترین دوربین کی مدد سے بھی نہ دیکھا جاسکتا ہو۔ لہٰذا وہ سائنس دان حکومت سے ریسرچ کی مد میں فنڈ مانگتے ہیں تاکہ ایک بڑی اور طاقتور دوربین تیارکی جاسکے۔ لگ بھگ تین برس کے عرصے میں ایک نئی دوربین تیار کرلی جاتی ہے۔ اگر تو اس دوربین کی مدد سے وہ نامعلوم سیارہ نظر آجائے تو سائنس دان خوشیاں منائیں گے کہ نیوٹن کے نظریے کی ایک بار پھر تصدیق ہوگئی۔ فرض کریں وہ نامعلوم سیارہ دوربین میں دکھائی نہیں دیتا ۔کیا سائنس دان اسے نیوٹن کے نظریے کی شکست تسلیم کرلیں گے؟ نہیں بلکہ وہ کہیں گے کہ دراصل ایک فضائی بادل [Cloud of Cosmic Dust] نے اس نامعلوم سیارے کو ڈھانپ رکھا ہے جس کی وجہ سے وہ سیارہ ہمیں نظر نہیں آیا۔ چنانچہ سائنس دان مزید ریسرچ فنڈ مانگتے ہیں تاکہ ایک خلائی شٹل بادل کے مشاہدے کے لیے بھیجی جاسکے۔ اگر خلائی شٹل کسی ایسے بادل کی نشاندہی کر دے تو اسے نیوٹن کے نظریے کی زبردست کامیابی قرار دیا جائے گا۔ لیکن فرض کریں وہ بادل بھی نہ پایا جائے کیا اب سائنس دان نیوٹن کے نظریۂ کششِ ثقل بشمول اپنے خیالات کہ ایک نامعلوم سیارہ ہے یا یہ کہ ایک فضائی بادل ہے کی تردید کر دیں گے؟ نہیں بلکہ اب وہ کہیں گے کہ کائنات کے اس حصے میں کوئی مقناطیسی قوت [Magnetic Field] ہے جس نے سٹیلائٹ کے آلات کو صحیح کام نہیں کرنے دیا ہوگا جس کی وجہ سے وہ بادل دریافت نہ ہوسکا۔ چنانچہ ایک نئی قسم کی خلائی شٹل تیار کر کے فضا میں بھیجی جاتی ہے۔ اگر وہ مقناطیسی قوت وہاں مل جائے تو نیوٹن کے مداح سائنس دانوں کی خوشی کی انتہا نہ ہوگی۔ لیکن فرض کریں ایسا نہ ہوسکے۔ کیا اب وہ نیوٹن کے نظریے کی شکست تسلیم کرلیں گے؟ نہیں بلکہ وہ ایک نیا اضافی مفروضہ تراشیں گے…… یہاں تک کہ یہ سالوں پر محیط کہانی تحقیقی رسالوں کی اقساط میں دب کر گم ہوجاتی ہے اور پھر کبھی بیان نہیں کی جاتی”۔ 1

            فائن مین لے کا ٹوش کے نقطۂ نظر سے اتفاق نہیں کرتا وہ لکھتا ہے:

            It would have been in fact, the death of this wonderful theory if there were no other explanation. If a Law does not work even in one place where it ought to it is just wrong.

2. طبیعیات کی دنیا میں انقلاب : کوانٹم فزکس اور کلاسیکل فزکس :

            پلانکس کو انٹم تھیوری انیسویں صدی میں پیش کی گئی اس وقت کہا جاتا تھا کہ توانائی [Energy] اور مادّہ[Matter] میں فرق ہے، انرجی مسلسل اور شعاعوں کی شکل میں ہوتی ہے ، جب کہ مادّہ ٹھوس ہوتا ہے، مادہ کی شکل میں ایک جوہر دوسرے سے جدا ہوتا ہے لہٰذا مادہ Discontinue ہوتا ہے یہ مادہ اور روشنی دونوں کا بنیادی فرق تھا، پلانکس نے کہا کہ روشنی پیکٹ کی صورت میں سفر کرتی ہے لہٰذا Wave Theory of Light  روشنی کی شعاعوں کا نظریہ سوالیہ نشان بن گیااس وقت تمام طبیعیات دان شعاعوں کی صورت میں روشنی کے سفر کے قائل تھے۔

            سایہ بننے کا عمل، روشنی کے انعطاف [Difrection] کا طریقہ کار، پولر ائزیشن کا طریقہ منشور سے گزر کر روشنی کا سات رنگوں میں ڈھلنا ،یہ سب تجربات، مشاہدات، نتائج پلانکس کی تھیوری سے

ثابت نہیں ہوتے تھے۔ پیکٹ تھیوری کو مذاق سمجھ کر تمام طبیعیاتی سائنس دانوں نے مشترکہ طور پر رد کردیاتھا۔لیکن روشنی کا شعاعی نظریہ اس بات کا جواب نہیں دے سکا کہ Lines spectrum کیوں بنتے ہیں؟ ظاہر ہے اس سوال کا تعلق جوہر کے ڈھانچے سے تھا۔ بوہر جب آیا تو اس نے پلانکس کے روشنی

کے نظریے سے اس طریقہ کار کی تشریح اس طرح کی کہ یہ مسئلہ اس نے حل کردیا پلانکس کا  نظریۂ روشنی کئی سال بعد درست ثابت ہوگیا۔ مسترد شدہ نظریہ زندہ ہوگیا۔ طبیعیات کی دنیا میں انقلاب آگیا۔ اس کے

نتیجے میں طبیعیات کلاسیکل فزکس اور کوانٹم فزکس کے دو دائروں میں تقسیم ہوگئی۔ یہ نظریہ کہ سائنس ایک ہی  حقیقت کی طرف اشارہ کرتی ہے اس نظریے سے غلط ثابت ہوگیا۔ یہ بات بھی علمی دنیا میں تسلیم کرلی گئی کہ کسی عمل، حقیقت اور نتیجے کی ایک ہی سائنسی تشریح تمام جزئیات کو بیان نہیں کرسکتی۔ اگر ذاکر نائیک  صاحب اس وقت موجود ہوتے تو یقینا وہ بھی پلانیکس کی پیکٹ تھیوری [Packet Theory] کو

 

  1. Imre Lakotos and A. Musgrave [ed.], Falsification & Methodology of Scientific Research Programme, in Criticism and the Growth of Knowledge, Cambridge: Cambridge University Press, 1974, pp.100-101.
  2. P. Feynman, Six Easy Pieces. U.S.A.: Helix Books, 1995, p.99

حقیقت تسلیم نہیں کرتے اور ویوز تھیوری [Waves Theory]، کے حق میں قرآن و سنت، عقل و منطق، علم و فن اور دلائل کے انبار لگا دیتے۔ اسی لیے کسی بھی سائنسی حقیقت کو حتمی، قطعی اور آخری حقیقت مان کر اس کو ٹھوس نتیجہ سمجھنا ، فلسفۂ سائنس کی دنیا میں فی زمانہ ایک غیر علمی رویہ ہے۔کیا پلانکس کی کوانٹم تھیوری ٹھوس حتمی اور قطعی ہے ؟ظاہر ہے بالکل نہیں! فائن مین اس کے بارے میں لکھتا ہے:

            Newton thought that light was made up of particles, but then it was discovered, as we have seen here, that it behaves like a wave. Later, however (in the beginning of the twentieth century) it was found that light did indeed sometimes behave like a particle. Historically, the electron, for example, was thought to behave like a particle, and then it was found that in many respects it behaved like a wave. So it really behaves like neither. Now we have given up. We say: “It is like neither.” There is one lucky break, however-electrons behave just like light. The quantum behavior of atomic objects (electrons, protons, neutrons, photons, and so on) is the same for all; they are all “particle waves,” or whatever you want to call them. So what we learn about the properties of electrons (which we shall use for our examples) will apply also to all “particles,” including photons of light.

            The gradual accumulation of information about atomic and small-scale behavior during the first quarter of this century, which gave some indications about how small things do behave, produced an increasing confusion which was finally resolved in 1926 and 1927 by Schrodinger, Heisenberg, and Born. They finally obtained a consistent description of the behavior of matter on a small scale.1

            ”زماں، مکاں، حرکت سے متعلق  قدیم سائنسی نظریات نیوٹن کے قوانین حرکت نے یکسر ختم کردیے لیکن نیوٹن کے قوانین حرکت تک علمی سفر ایک دو جستوں میں مکمل نہیں ہوا۔ کاپرنیکس، گیلی لیو کو سب جانتے ہیں لیکن Tycho Brahe جیسے عظیم ماہر فلکیات کو کوئی نہیں جانتا جو اپنی رصد گاہ میں سالوں تک سیاروں اور ستاروں کی گردش کا مشاہدہ کرکے ان نتائج کو ہزاروں صفحات میں سموتا اور منتقل کرتا رہا، کوپن ہیگن کے جزیرہ Hven کی اس رصد گاہ کو لوگ بھول گئے ہیں۔ Tychoکے تحریری ضخیم مشاہدات سے استفادہ کرتے ہوئے ریاضی داں Kepler نے سیاروں کی حرکت کے سادہ مگر نہایت خوبصورت اور معرکہ آرا قوانین دریافت کیے ، اس کے بعد نیوٹن نے اپنے قوانین پیش کیے، لیکن جس طرح کلاسیکل فزکس قطعی نہیں تھی اس طرح نیوٹونین فزکس اور آئن اسٹائن کی فزکس ٹھوس قطعی اور حتمی نہیںہے فائن مین لکھتا ہے:

            Finally let us compare gravitation with other theories. In recent years we have discovered that all mass is made of tiny particles and that there are several kinds of interactions, such as nuclear forces, etc. None of these nuclear or electrical forces has yet been found to explain gravitation. The quantum-mechanical aspects of nature have not yet been carried over to gravitation When the scale is so small that we need the quantum effects, the gravitational effects are so weak that the need for a quantum theory of gravitation has not yet developed. On the other hand, for consistency in our physical theories it would be important to see whether Newton’s law modified to Einstein’s law can be further modified to be consistent with the uncertainty principle. This last modification has not yet been completed.2

             یہ خیال کہ سائنس تجربات سے وجود پذیر ہوتی ہے درست نہیں ہے، کوپرنیکس، پلانکس ، یوکاوا [Yukawa] نیوٹن اور آئن اسٹائن نے اپنے نظریات، طبیعیاتی اور ریاضیاتی قوانین صرف تجربہ گاہوں میں جا کر اخذ نہیں کیے یہ نتائج رفتہ رفتہ علم اور تجربے سے تصدیق حاصل کرتے رہے یہ کام دوسرے سائنس دانوں نے کیا۔ فائن مین لکھتا ہے:

            Because atomic behavior is so unlike ordinary experience, it is very difficult to get used to and it appears peculiar and mysterious to everyone, both to the novice and to the experienced physicist. Even the experts do not

 

  1. Ibid.,p.116. 2. Ibid., p.113.

understand it the way they would like to, and it is perfectly reasonable that they should not, because all of direct, human experience and of human intuition applies to large objects. We know how large objects will act, but things on a small scale just do not act that way. So we have to learn about them in a sort of abstract or imaginative fashion and not by connection with our direct experience.1

            But is this such a simple law? What about the machinery of it? All we have done is to describe how the earth moves around the sun, but we have not said what makes it go. Newton made no hypotheses about this; he was satisfied to find what it did without getting into the machinery of it. No one has since given any machinery. It is characteristic of the physical laws that they have this abstract character. The law of conservation of energy is a theorem concerning quantities that have to be calculated and added together, with no mention of the machinery, and likewise the great laws of mechanics are quantitative mathematical laws for which no machinery is available.

            We use mathematics to describe nature without a mechanism behind it? No one knows. We have to keep going because we find out more that way.

            Many mechanisms for gravitation have been suggested. It is interesting to consider one of these, which many people have thought of from time to time. At first, one  is quite excited and happy when he “discovers” it, but he

 

  1. Ibid., p. 117.

soon finds that it is not correct.1

            کیا سائنس آئیڈیل علم ہے؟ اگر ہے تو کیا اس کے تجربات آئیڈیل ہوتے ہیں؟ کیا فطرت کو سائنس کے مثالی [Ideal] طریقے سے دیکھا جاسکتا ہے کیا؟ اس طرح کے دعوے جدید سائنس کی دنیا میں درست دعوے ہیں؟ایک مثالی تجربہ [Ideal Experiment] کیا ہوتا ہے؟ اس بارے میں فائن مین ہمیںبتاتا ہے کہ فطرت کو جاننے کا طریقہ اور تجربہ مثالی نہیں ہے، اسی نقطہ نظر کی تشریح کرتے ہوئے مزید لکھتا ہے:

(1) The probability of an event in an ideal experiment is given by the square of the absolute value of a complex number 0 which is called the probability amplitude.

P = probability,

            f = probability amplitude,            

            P = |f |2 .

(2) When an event can occur in several alternative ways, the probability amplitude for the event is the sum of the probability amplitudes for each way considered separately. There is interference.

f = f1 + f2,

            P = | f1  + f2 |2.

(3) If an experiment is performed which is capable of determining whether one or another alternative is actually taken, the probability of the event is the sum of the  probabilities for each alternative. The interference is lost.

            P = P1 + P2.                  

One might still like to ask: “How does it work? What is the machinery behind the law?” No one has found any  machinery behind the law. No one can “explain” any more

than we have just explained.” No one will give you any  deeper representation of the situation. We have no ideas

  1. Ibid., pp. 107-108.

about a more basic mechanism from which these results can be deduced. We would like to emphasize a very important difference between classical and quantum mechanics. We have been talking about the probability that an electron will arrive in a given circumstance. We have implied  that in our experimental arrangement (or even in the best possible one) it would be impossible to predict exactly what would happen. We can only predict the odds! This would mean, if it were true, that physics has given up on the problem of trying to predict exactly what will happen in a definite circumstance. Yes! Physics has given up. We do not know how to predict what would happen in a given circumstance, and we believe now that it is impossible, that the only thing thnt can be predicted is the probability of different events. It must be recognized that this is a retrenchment in our earlier ideal of understanding nature. It may be a backward step, but no one has seen a way to avoid it.

We make now a few remarks on a suggestion that has sometimes been made to try to avoid the description we have given: “Perhaps the electron has some kind of internal works-some inner variables-that we do not yet know about. Perhaps that is why we cannot predict what will happen. If we could look more closely at the electron we could be able to tell where it would end up.” So far as we know, that is impossible. We would still be in difficulty.1

حواس سے صرف احتمالی سچ تک ہی رسائی ممکن ہے:

             فلسفہ سائنس کی کوئی بھی کتاب پڑھ لی جائے، ہر کتاب میں یہی تصور اور نظریہ اور اصول ملے       

 

  1. Ibid.، pp. 134-135.

گا کہ حواس خمسہ کی بنیاد پر حاصل کردہ علم اخذ کردہ نتائج، مشاہدات اور تجربات سے صرف امکانی سچ [Probable Truth] تک رسائی ممکن ہے نہ کہ ٹھوس، قطعی، حقیقی، اصلی، واقعی اور ابدی، سچائی تک۔ سائنسی علم اس علم کو کہتے ہیں جس میں کذب، تردید اور انکار کا امکان ہر وقت موجود رہتا ہے۔ جس نظریے میں رد ہونے کے زیادہ امکانات ہوں گے وہ نظریہ زیادہ ترقی کرے گا، ارتقاء کی منازل کا سفر کامیابی سے طے کرے گا۔ سائنس کی سچائی سائنسی طریقے ]سائنٹفک میتھڈ[ سے آتی ہے۔ یعنی سائنسی علم محتاج ہے سائنسی طریقہ کار کا، جب کہ حقیقت سائنسی علم سے ماورا ہوتی ہے اور بے شمار سائنس داں اس کا انکار نہیں کرتے لیکن سائنس دانوں کا موقف یہ ہے کہ ہم علم کے دائرے میں صرف اس حقیقت کو زیر بحث لائیں گے جو ہمارے محدود تجربے کے دائرے میں آسکے۔ ہمارے تجربے اور علم کے دائرے سے حقیقت کے خارج ہونے کا مطلب یہ نہیں کہ وہ حقیقت نہیں ہے لیکن سائنسی علمیت اسے سائنسی حقیقت کے طور پرقبول نہیں کرتی۔ جو حقیقت سائنسی ذریعۂ علم کے ذریعہ دائرہ فہم میں نہیں آسکتی وہ حقیقت کے زمرے سے خارج نہیں ہوتی۔ اس سے حقیقت کا انکار نہیں ہوتا بلکہ سائنسی ذریعہ علم کی تحدید کا اندازہ ہوتا ہے۔ سائنسی حقیقت [scientific fact of reality] صرف طے شدہ سائنسی علمیت [specific scientific method] سے ہی حاصل ہوسکتی ہے، اس مقام پر سائنسی علمیت اپنی محدودیت کا اعتراف کرنے کے بجائے تکنیکی طریقے سے حقیقت الحقائق کا انکار کرتی ہے۔ لہٰذا اصلاً وہ تمام حقیقتیں فی الواقع حقیقت ہوتی ہیں جو اپنے ہونے کا جواز اپنے اندر رکھتی ہیں، وہ exists as its own right ہوتی ہیں وہ کسی خارجی ذریعہ تصدیق کی محتاج نہیں ہوتی۔ یہ حقیقتیں اپنے دائرے اور اپنے منہاج

علم میں حقیقت تسلیم کی جاتی ہیں جو اس منہاج علم کو تسلیم نہیں کرتا وہ اس حقیقت کو حقیقت ہی نہیں مانتاکیوں کہ اس کا منہاج اُس کے ذریعے اور اخذ کردہ نتائج کی علمیت بھی بالکل مختلف ہے ،اسی لیے انبیا لوگوں کے قلوب بدل کر انھیں علم صحیح عطا کر کے وہ منہاج  دیتے ہیں جس میں حقیقت عین الیقین کا درجہ  اختیار کرلیتی ہے۔ جیسا کہ اللہ تعالیٰ، جیسے کہ روح اور جیسے کہ ذات رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم ۔

حقیقت ناقابلِ تغیر و تبدّل ہے:

            حقیقت کسی طریقہ کار کے ذریعے عارضی طور پر حقیقت مان لی جائے اور یہ حقیقت قطعی اور حتمی نہ ہو بلکہ اس طریقہ کار کے تحت اس حقیقت کو بدلنے، رد کرنے کے سو فیصد امکانات ہر وقت موجود رہیں۔ تو حقیقت حقیقت اصلی نہیں ہے موضی، سائنسی یعنی وقتی حقیقت ہے جب کہ حقیقت بدلتی  نہیں وہ ازل سے ابد تک ایک رہتی ہے، جو بدل جائے اور مسلسل بدلتی رہے وہ حقیقت نہیں بلکہ سائنسی علم ہے او ر کسی نظریے کی محض سائنسی توجیہہ۔ سائنسی طریقہ کسی آفاقی سچ کو بیان ہی نہیں کرسکتا۔ یہ سائنسی طریقے کا مسئلہ ہے ہمارا اعتراض اس طریقے پر ہے جسے جدیدیت پسند مسلم مفکرین سائنٹفک میتھڈ قرار دیتے ہیں۔ اور اس سے ماورائے سائنس حقائق ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

            اس بحث سے یہ بات خودبخود واضح ہوجاتی ہے کہ انسانی ذہن کے استعمال کے نتیجے میں پیدا ہونے والی کوششوں کو جاننے کا طریقہ سائنٹفک میتھڈ ہے۔مذہب انسانی کوششوں کا نتیجہ نہیں یہ انعام ربی اور وحی الہٰی ہے۔لہٰذا العلم یعنی وحی کا موازنہ یا تجزیہ یا اس کی تصدیق تائید و توثیق کے لیے انسانی، ظنی، قیاسی، حسی، تجربی، غیر قطعی، عقلی ، عملی ، اختباری، وجدانی اور قابل تغیر سائنسی طریقے سے مدد لینا غیر سائنسی اور غیر دینی رویہ ہے۔ سائنس کے منہاج علم میں بھی یہ طریقہ قابل قبول نہیں ہے اور مذہب کے منہاج میں بھی یہ غیر معتبر طریقۂ کار ہے ۔

یونانی دیو مالا: علم کی اذیت کا فلسفہ:

            دو سو اسی قبل مسیح میں ارسطو نے حرکت کا نظریہ پیش کر کے علم کونیات کو ایک نیا تصور دیا کہ کوئی چیز حرکت اس لیے کرتی ہے کہ چیزیں اپنے اصل کی طرف سفر کرتی ہیں آگ اوپر جاتی ہے، پتھر سمندر کے نیچے پاتال میں جاتا ہے کیونکہ وہاں زمین ہے آسمانی اجسام سورج تارے، چاند، آگ کے ہیں اس لیے اوپر رہتے ہیں اور اسی لیے آگ ہمیشہ اوپر کی طرف جاتی ہے۔انسان عناصر اربعہ سے تخلیق ہوا ہے، ہوا، مٹی، پانی اور آگ، اس کی روح آگ سے تخلیق ہوئی ہے، اس لیے انسان کے انتقال کرتے ہی اس کی روح آسمان کی طرف پرواز کرجاتی ہے کیونکہ آگ بلندی کی طرف جاتی ہے اس لیے  یونانی فکر میں انسان مرنے کے بعد اپنے اچھے اعمال کے باعث ستارہ بن کر آسمان پر چمکے گا اور بعض فلاسفہ کے یہاں برے اعمال کے باعث عورت بنا کر اس دنیا میں بھیج دیا جائے گا، عورت بننا سب سے بڑی سزا ہے۔ ہوا بھی اوپر جاتی ہے اس لیے وہ پانی سے نکل کر اوپر چلی جاتی ہے۔ یونانی دیو مالا کے مطابق آگ آسمان سے آتی ہے لہٰذا وہیں جائے گی۔ پرومیتھس[Prometheaus] ایک یونانی دیومالائی خدا تھا جو علم کو آگ سمجھتا تھا۔ زیوسس[Zuses] نے کہا انسان کو سب ملے گا، صرف آگ نہیں ملے گی۔ پرومیتھس کہتا تھا کہ آگ علم ہے وہ آگ آسمان سے لے کر بھاگ آیا۔ اور زمین پر اس نے آگ انسانوں کے سپرد کر دی۔ زیوسس نے  پرومیتھس  کو اس حرکت پر سخت ترین سزا دی اس کے سینے پر ایک گدھ مسلط کر دیا جو اس کا جگر نوچ نوچ کر کھا تاجاتا ہے۔ رات کو گدھ سوتا ہے تو جگر دوبارہ پیدا ہو جاتا ہے۔ صبح گدھ دوبارہ جگر کھانا شروع کر دیتا ہے ] اس دیو مالا سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ یونانیوں کے یہاں ہزاروں سال پہلے یہ علم موجود تھا کہ جگر خودبخود بنتا ہے۔ آج سائنس نے بتایا ہے کہ جگر خود پیدا [Re-generate] ہوجاتا ہے۔ یہ بات یونانیوں کو معلوم تھی[ اس حکایت میں یہ بھی بتایا گیا کہ علم لذت اندوزی کا ذریعہ نہیں۔ یہ حکایت علم کی اذیت [agony of knowldge] بتاتی ہے کہ علم جب آتا ہے تو وہ آگہی روشنی لے کر آتا ہے جو اذیت رساں ہوتی ہے۔ یہ اذیت حاصل کرنے والا دنیا کو اس اذیت سے نجات دینے کے لیے کام کرتا رہتا ہے۔ قدیم یونانی فلسفۂ حقیقت کے چار اہم اجزا  و عناصر تھے۔ یعنی آگ، ہوا، پانی، مٹی انہی چار عناصر سے حیات وجود میں آئی تھی:

زندگی کیا ہے عناصر میں ظہور ترتیب

موت کیا ہے انہی اجزا کا پریشاں ہونا

            ارسطو نے اپنے فلسفۂ حرکت کے ذریعے چار اجزا و عناصر کی ایک ایسی توجیہہ، تشریح و توضیح پیش کی جس نے غالب علمیت سے ہم آہنگ علم کونیات کو جنم دیا جو دو ہزار سال تک دنیا بھر کے مفکرین کو متاثر کرتا رہا۔ اس وقت قوت تجاذب کا تصور نہیں تھا، ارسطو موشن کا تصور نیچرل آرڈر سے اخذ کرتا تھا:

 Motion is a thing dependent on its natural order حرکت کا یہ یونانی تصور و فلسفہ ارسطو کی علمیت کے زیرِ اثر کئی صدیوں تک چلتا رہا سترہویں و اٹھارہویں صدی میں نیوٹن، گیلی اور کیپلر حرکت کے اس قدیم مستند لیکن غلط تصور پر سوالات اٹھارہے تھے ،نیوٹن نے Laws of Motion دریافت کر کے ارسطو کے تصور حرکت کو مسترد کردیا۔نائیک صاحب اس زمانے میں ہوتے تو یہی فرماتے کہ حرکت کا یونانی تصور ٹھوس سائنسی نتیجہ ہے جودو ہزار سال سے مسترد نہیں ہوسکا اسے ٹھوس حقیقت مان لیا جائے اور قرآن کی آیات کو توڑ مروڑ کر اس نظریے کا اثبات قرآن سے ثابت بھی کر دیتے۔

            کمیت [Mass] نیوٹن کی فزکس میں مطلق ہے لیکن وزن تبدیل ہو سکتا ہے، آئن اسٹائن کی فزکس میں کمیت اضافی [relative] شے ہے، آئن اسٹائن کی نئی تشریح کمیت سے نیوٹن کا تصور کمیت بدل گیا، نیا منہاج وجود میں آیا اور نئی سائنسی ترقی کا دریچہ کھل گیا۔ لیکن نیوٹن کی سائنس کا دریچہ بند نہیں ہوا وہ بھی موجود ہے۔

            جناب ذاکر نائیک اس دور میں ہوتے تو اس سائنسی حقیقت کے بارے میں کیا مذہبی دلیل دیتے ؟وہی دلیلیں جو آج کل وہ عہد حاضر کی غیر قطعی سائنسی حقیقتوں کے بارے میں دے رہے ہیں۔ نائیک صاحب حقیقت، ادراکِ حقیقت، توجیہاتِ ادراکِ حقیقت الگ الگ اقالیم اور سطحیں ہیں وہ ان سطحوں کے باہمی فرق سے واقف نہیں ورنہ وہ خلط مبحث کا شکار نہ ہوتے یہ تین مختلف سطحیں ہیں اور اشیا کو دیکھنے کے ان تینوں طریقوں کے نتائج بھی مختلف ہوتے ہیں۔

حقیقت کی معرفت: اُصول اور ذرائع:

            اصولی طور پرحقیقت اپنے ہونے کا جواز اپنے اندر رکھتی ہے:Exists as its own right لیکن سوال یہ ہے کہ حقیقت تو ہے لیکن میں اسے جان سکتا ہوں یا نہیں؟ اور جو جان رہا ہوں اس میں معروضیت ہے یا نہیں ؟اور جو کچھ میں جان چکا فی الواقع وہ حقیقت ہے یا نہیں؟ اس کے لیے حقیقت [reality]اس کے حصول کی علمیت [Epistomology] اور اس علمیت کی معروضیت[objectivity of epistmology] کا جاننا ضروری ہے ۔

            سترہویں صدی میں سائنس دانوں اور بعض فلاسفہ نے دعویٰ کیا تھا کہ حقیقت تو ہے لیکن معروضیت کے ساتھ حقیقت کو جاننے کا مفروضہ سائنٹفک میتھڈ کہلاتا ہے، یہ محض مفروضہ ہے حقیقت نہیںہے کیونکہ حقیقت کیا ہے اس کا علم تو جدید سائنس اور فلسفے کو سرے سے نہیں ہے، اس لیے یہ کہنا کہ ہر حقیقت کو صرف معروضی عمل سے جانا جاسکتاہے اور اس کا فہم معروضی عمل کے ذریعے ہی ممکن ہے ایک غلط بات ہے اس کے سوا بھی ہم حقیقت کو موضوعی اور جمالیاتی طورسے بھی  جان سکتے ہیں۔بعض حقیقتوں کو ہم  نہایت شدت کے ساتھ صرف محسوس کرتے ہیں لیکن ان کے وجود کو تجربے، حسی عمل کے ذریعے دوسرے کو نہیں بتاسکتے مثلاً احساس گناہ [Guilt]، احساس مسرت [Happiness]، احساس درد [Pain] احساس غم [Sadness] احساس محبت [Love] وغیرہ وغیرہ حقیقت کو جاننا علمیت کا دائرہ ہے حقیقت کو ایسے جاننا کہ اس میں معروضیت ہو یہ معروضیت اور ما بعد الطبیعیات کا دائرہ ہے۔

            سائنس ان حقیقتوں سے بحث کرے گی جو اس کے محدود حسی، تجربی، عملی، مادی اور اختباری دائرے میں آسکیں ،سائنسی دلائل حقیقت نہیں بلکہ توجیہات حقیقت [explanation of reality]ہیں، لیکن عموماً لوگ ان توجیہات [explanations]کو حقیقت [reality]سمجھ لیتے ہیں، جبکہ یہ توجیہات زمانے کے ساتھ بدلتی رہتی ہیں، سائنس تو محض ایک میکانزم ہے جو توجیہات حقیقت کے ساتھ بدلتا ہے جہاں صرف حقیقت کو جانا نہیں جاتا بلکہ حقیقت کو تخلیق کیا جاتا ہے۔

دفاع مذہب کے لیے غیر معمولی ذہانت کی ضرورت:

            میں خدا کا قائل ہوں مگر میری توجیہات احمقانہ ہوں تو اس سے خدا یا روحانیت کی تردید نہیں ہوتی، کسی دلیل کے رد ہونے کا مطلب یہ نہیں کہ وہ حقیقت نہیں ہے۔ البتہ یہ کہہ سکتے ہیں کہ حقیقت کے حق میں دی گئی دلیل کم زور ہے۔ کسی مضبوط سے مضبوط موقف کے حق میں بھی دلیل ہمیشہ مضبوط اور سوچ سمجھ کر دینی چاہیے ایک کمزور دلیل مضبوط موقف کو بھی کمزور کرنے کا باعث بن سکتی ہے لیکن اس کا ازالہ ایک طاقت ور دلیل سے کیا جاسکتا ہے۔ اس لیے سائنس اور مذہب کے دفاع کا کام ذہین ترین لوگ کرتے ہیں لیکن عصر حاضر میں تمام ذہانت سائنس کے میدان میں منتقل ہوگئی ہے اور مذہب کے میدان سے ذہین لوگوں کا مسلسل انخلا ہو رہا ہے لہٰذا اس انخلا کو روکنے کی ضرورت ہے کہ ذہانت کا مقابلہ ذہانت سے بلکہ مدمقابل سے زیادہ ذہانت کے ساتھ کیا جانا چاہیے۔ انسان کی عمر بہت مختصر ہے وہ جس شے کو حقیقت سمجھ رہا ہے وہ اس کی زندگی تک حقیقت ہے، ممکن ہے، اس کے وصال کے بعد حقیقت وہ نہ رہے۔ جیساکہ تاریخ میں اکثر ہوا ہے۔ دو ہزار سال تک تمام فلاسفہ مذہبی لوگ اور سائنس داں یقین کرتے رہے کہ زمین ساکن ہے یہی لکھتے، پڑھتے، لڑتے، جھگڑتے اور بحث و مباحثے کرتے کرتے مر گئے۔ حقیقت دو ہزار سال بعد تبدیل ہوگئی۔ پلوٹو [Pluto] کو ایک صدی تک نظام شمسی کا نواں سیارہ [Planet] سمجھا گیا، سو سال تک طلبا، اساتذہ سائنس داں یہی پڑھتے رہے، یہی پڑھتے پڑھتے مر گئے، اسی کو حقیقت سمجھتے رہے، لیکن ان کے مرتے ہی حقیقت تبدیل ہوگئی۔ لہٰذا سائنسی حقیقتوں کواصل ٹھوس حقیقت سمجھنا فلسفۂ سائنس کی دنیا میں قابل قبول علمی رویہ نہیں۔

            کئی سو سال تک یہ تصور سائنس راسخ رہا کہ انسان کا جنیٹک کوڈ بدل جاتا ہے، حیاتیاتی علوم [biological science]،میں نظریہ ارتقا [Evolution Theory] کے زیر اثر سالہا سال تک یہ سمجھا جاتا رہا کہ adoptionکے طریقے سے transformation ہو جاتاہے جدید تحقیق  سے معلوم ہوا کہ mutation کے ذریعے سےDNAتباہ ہوسکتا ہے  دوبارہ تخلیق[reproduce] نہیں ہوسکتا۔لہٰذا کوڈ تبدیل نہیں ہوسکتا۔ اسی طرح پہلے نظریہ ارتقا کے تحت اگر بیماری سے کسی کا جینیاتی کوڈ بدل گیا mutation ہوگیا جس کے نتیجے میں کسی انسان کے تین ہاتھ دوسرنکل آتے تو اسے نئی نوع سمجھا جاتا تھا لیکن یہ کیفیت اگلی نسل میں برقرار نہیں رہتی تھی لہٰذا mutation کو اب ارتقائی عمل نہیں سمجھا جاتا۔

            قدیم ارتقا کے تصور ات کے تحت ایک نوع دوسری نوع میں تبدیل ہوجاتی تھی اس کا کوڈ اس تبدیلی کے باعث بدل جاتا تھا لیکن اب ایک نوع دوسری نوع میں تبدیل  ہی نہیں ہوسکتی یہ جدید تحقیق ہے، غرض سائنس کے ٹھوس نظریات صدیوں ، سالوں اور طویل عرصے میں بدل جاتے ہیںان سے مذہب یا قرآن کا اثبات کرنا غلط رویہ ہے، ہمارے یہاں مغربی سائنس کی جس طرح پرستش کی جاتی ہے خود  مغرب سائنس کی اس طرح پرستش نہیں کرتا۔

سائنس، مفروضات سے ماورا: ایک مسترد نظریہ :

            ڈیکارٹ سے ہزرل، ہیوم، برکلے، کانٹ، ہیگل، مارکس، اینجلز تک فلسفے کا مقصد Regress science بتایا جاتا تھا۔ مفروضات سے ماورا فلسفہ۔ سائنس کی پرستش اس بنیاد پر کی جاتی تھی کہ یہ مفروضات پر انحصار نہیں کرتی لیکن ہزرل نے اس طلسم کا پردہ فاش کر دیا اس کے فلسفہ، فنامنا لوجی ،اس کے بعد پوسٹ ماڈرن ازم، Existentialism اسٹرکچرل ازم، ڈی کنسٹرکشن ازم نے اس پورے تصور کو تہس نہس کر کے رکھ دیا کہ سائنس مفروضات سے ماورا کوئی شے ہے۔ ہزرل نے ثابت کیا کہ Positivism اور نیچرل ازم مفروضات سے ماورا [Pre-suppostion less] نہیں ہیں۔ بلکہ یہ نظریات اور فلسفے بے شمار مفروضات پر انحصار کرتے ہیں۔ ایک مفروضہ Realistic Dualism کا ہے، یعنی میں مان لو ں کہ ایک subject اور ایک object ہے دونوں میں تعلق ہے لیکن دونوں ایک دوسرے پر منحصر نہیں۔

            ہزرل معروضی علم کو ممکن سمجھتا تھا۔ اس نے نیچرل ازم اور پازیٹوازم کو رد کیا لیکن اس خیال کو رد نہیںکیا کہ سائنٹفک میتھڈ کی بنیاد پر حاصل علم ماورائے تاریخ ہوسکتا ہے اس کے لیے  ہزرل نے phenominological Reduction کا میتھڈ دیا لیکن فنا منالوجی سے زیادہ طاقت ور نظریہ Existensialism نکل کر آیا جس کا خالق ہزرل کا شاگرد رشید ہائیڈیگر تھا۔ہزرل کے شاگرد ہائیڈیگر نے اشیا کی معروضیت کے اس تصور کو رد کردیا جو فنامنالوجی سے اخذ کیا گیا تھا۔

            ہائیڈیگر کے خیال میںہزرل کا فلسفہ غیر جانبدار نہیں ہے۔ نہ ہی مفروضات سے ماورا ہے pure subject کبھی نہیں مل سکتا کیونکہ وجود ہمیشہ اس دنیا میں being in the world ہے لہٰذا نہ pure subject ہوگا نہ pure object۔

            نیچرل ازم [Naturalism] اور پازیٹوازم [Positivism] کے اپنے اپنے مفروضات ہیں ،ان مفروضات نے نہ صرف سائنس کو نقصان پہنچایا بلکہ فلسفے کا بھی گلا کاٹ دیا، ١٩٣٦ء میں ہزرل کی کتاب Crisis of European Sciences لکھی گئی، اس کے بعد نیچرل ازم اور پازیٹو ازم کی آفاقیت سوالیہ نشان بن گئی۔ ہزرل نے کہا کہ معروضی بنیادیں Naturalism اور Positivism سے اخذ نہیں کی جاسکتیں کیونکہ یہ دونوں نقطہ ہائے نظر بذات خود مفروضوں پر قائم ہیں۔ یہ بات تسلیم کرلی گئی کہ جدید یورپی سائنس ایک خاص تہذیب، تاریخ، مابعدالطبیعیات، تناظر اور مفروضات کے افق سے طلوع ہوئی ہے۔ یہ آفاقی نہیں ہے۔ موضوعیت سے معروضیت کی طرف جانے کے لیے یعنی Subjectivityسے آزاد ہونے کے لیے ہزرل نے فنامنالوجیکل ریڈکشن [Phenominological Reduction]کا طریقہ دیا لیکن فلسفہ تاریخ بتاتا ہے کہ ہزرل کا یہ نظریہ خود مفروضات پر مبنی تھا اور غیر اقداری نہیں تھا۔

            ہائیڈیگر نے کہا کہ اگر ہزرل کے فلسفے کو مان لیں تو زبان کا مسئلہ پیدا ہو جاتا ہے، ہم معانی جس زبان سے اخذ کرتے ہیں کیا اخذِ معنیٰ کا وہ درست طریقہ ہے؟ کیا ورائے زبان [Meta-language] زبان کے بغیر ہم ما بعد الطبیعیاتی سوالات [Metaphysical question] کا علم اور ادراک حاصل کرسکتے ہیں؟ ماورائے تاریخ ہونے کے لیے کیا یہ زبان کافی ہے جو زمان و مکان میں محصور اور اسی کی پیداوار ہے ؟یا ادراک حقیقت کے لیے ورائے زبان کسی meta-language کی ضرورت ہے۔ یہاں یہ سوال اٹھایا جاسکتا ہے کہ ما بعد الطبیعیاتی مسائل اور سوالات اور ان کے جوابات سمجھنے کے لیے  کوئی زبان انسان تخلیق کرسکتا ہے  ؟یا یہ وحی الہی کے ذریعے نازل ہوتی ہے یہ وہ سوالات ہیں جو ہائیڈیگر کے فکر پر اٹھائے جاسکتے ہیں، مگر ہائیڈیگر کے منہاج علم میں ان سوالات کا جواب نہیں دیا جاسکتا۔  یہاں یہ سوال بھی اہم ہے کہ اقدار [Values]کہاں سے آتی ہیں ،ونگٹسٹائن جیسے فلسفی کے خیال میں اقدار باہر سے [external world] سے آتی ہیں تو سوال یہ ہے کہ کیا کوئی ما بعد الطبیعیاتی زبان تخلیق کی جاسکتی ہے؟ جو ان مسائل کا فہم عطا کرسکے۔

             کارل مارکس اپنے فلسفے کو سائنسی کہتا تھا اور خود کو سائنس داں سمجھتا تھا، لیکن اب تمام فلاسفہ کا اجماع ہے کہ سائنس مفروضات کے ساتھ اپنے سفر کا آغاز کرتی ہے۔ Falsification اور Sophisticated Induction نے تسلیم کر لیا کہ سائنس نظریے سے شروع ہوتی ہے اس کا آغاز مشاہدے [Observation] سے نہیں ہوتا، سائنسی مشاہدات خاص نقطۂ نظر، ما بعد الطبیعیات، مفروضات [Theory Laiden]  کے زیر اثرہوتے ہیں۔ یہ نظریے میں گندھے ہوئے علمی تجزیے [Epistemological Analysis] وجودیاتی تجزیوں [Ontological Analysis] کے بغیر ممکن ہی نہیں دونوں ایک دوسرے سے بندھے ہوئے ہیں۔

اٹھارویں صدی: فلسفے کا مقصد سچائی کی تلاش نہیں اس کی تخلیق:

            سائنس کے ذریعے تلاش حقیقت کے مفروضے اور دعوے سے تو خود سائنس اٹھارہویں صدی میں دستبردار ہوگئی تھی۔ اٹھارہویں صدی تاریخ انسانی کے لیے ایک اور صدمے کے باعث یادگار رہے گی۔ کیونکہ اس صدی میں فلسفہ بھی تلاش حقیقت کے دعوے سے دستبردار ہوگیا۔ عہد یونان سے کانٹ کے دور تک فلسفے کا مقصد حقیقت الحقائق کی تلاش اور جستجو رہی تھی لیکن کانٹ نے پہلی مرتبہ یہ اعلان کیا کہ فلسفہ کا مقصد سچائی کی تلاش نہیں ہے بلکہ انسانی مفادات کا تحفظ ہے۔ کانٹ نے مابعد الطبیعیات کی طرح فلسفے کو بھی انسان کا آلۂ کار بنا دیا۔ اس نقطۂ نظر کی کامل تفہیم کے لیے کانٹ کے نظریہ اخلاقی اور اس کے فلسفہ سیاسی کو بغور پڑھنے اور سمجھنے کی ضرورت ہے۔ کانٹ سے پہلے بہت سے فلاسفہ اخلاقیات ، اخلاقی زندگی اور روحانیت کے لیے مذہب کے وجود کو اہم سمجھتے تھے اور ناگزیر خیال کرتے تھے۔ کانٹ وہ پہلا فلسفی ہے جس نے اس نقطہ نظر کی مفصل علمی و عقلی تردید کر کے مذہب اور اخلاق کے درمیان آخری کڑی کو بھی توڑ کر رکھ دیا۔ کانٹ کے خیال میں اخلاقی اقدار کو عقل کے ذریعے سمجھا اور تخلیق کیا جاسکتا ہے۔ اس سلسلے میں وحی کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ اس کے نزدیک اخلاقیات کی بنیاد ارادہ انسانی ہے۔ ارادہ الٰہی یا قانون فطرت اخلاقیات کا منبع و ماخذ ہرگز نہیں ہے۔ اٹھارہویں صدی میں سائنس اور فلسفے کی جانب سے تلاش حقیقت کے دعوے سے دستبردار ہونے کے باوجود ہمارے جدیدیت پسند مفکرین ابھی تک سائنس کے ذریعے حقیقت الحقائق تک پہنچنے کی جستجو میں مصروف ہیں کیونکہ یہ نہ سائنس سے واقف ہیں نہ جدید فلسفے سے۔ انھیں یہ بھی نہیں معلوم کہ ازمنہ وسطیٰ کے یورپ میں سائنس کا مقصد کیا تھا:

            The basic function of natural science was telological, it served to find the divine order of the universe whose main feature had been provided by revelation. In other words, science was principally a means of illustrating theological truths for emphasizing the need to go beyond material existence. The answers were known in advance it was the job of science to prove that faith was supported by reason and physical facts.1

             ہمارے ذاکر نائیک صاحب ازمنہ وسطیٰ کے یورپ اور قدیم یونان کی تہذیب میں سائنس و ٹیکنالوجی کے مقاصد کو جدید سائنس پر منطبق کرنے کی غیر علمی اور لاحاصل مشق میں ابھی تک مصروف ہیں۔ سائنس جس کی اسلام کاری نائیک صاحب فرما رہے ہیں  اس سائنسی علم کے بارے میں  اگر مغرب کے صف اول کے فلاسفہ ہزرل، ہائیڈیگر، ڈلیوز، پاپر، مارکوزے، رچرڈ رارٹی، فوکالٹ، ہیبرماس  کی معرکہ آرا کتابیں پڑھ لی جائیں تو بہت سے توہمات ختم ہوسکتے ہیں،ان فلاسفہ اور سائنس دانوں کی کتابیں سائنس کی آفاقیت کے دعوے کو رد کرتی ہیں اور سائنس کے مفروضات سے ماوراء ہونے،اس

 

  1. Pervez Hoodbhoy, Muslims and Science: Religious Orthodoxy and the Struggle for Rationality, Vanguard, 1991, p.80.

کے غیراقداری عالمگیر ہونے کے تصورات کی تنقید کر کے اس اجمال کی تفصیل بیان کرتی ہیں۔

            مشہور ماہر معاشیات فریڈرک لسٹ جس نے بسمارک کے ساتھ مل کر کام کیا اور جرمنی کے جدید معاشیاتی ڈھانچے کی تعمیر میں کلیدی کردار ادا کیا۔ جدید انسان کے بارے میں وہ عجیب بات لکھتا ہے کہ ”عقل مند آدمی وہ ہے جو جانتا ہے کہ وہ کیا چاہتا ہے جو چاہتا ہے زیادہ سے زیادہ حاصل کرنا چاہتا ہے اس زیادہ سے زیادہ کا حصول ایسے طریقے سے چاہتا ہے کہ کم سے کم خطرات کا سامنا کرتے ہوئے زیادہ سے زیادہ کا جلد حصول جلد از جلد ممکن ہوجائے۔ جو شخص، فرد، معاشرہ ان تین سطحوں پرزندگی کے تانے بانے کو اس فلسفے کے تحت بننے کا قائل ہو وہی شخص، وہی تہذیب اور وہی فرد حقیقتاً عقلی [Rational] ہے، فریڈرک کا یہ تصور عقلیت معاشیات میں آج بھی مستعمل ہے اور مشہور سیاسی فلسفی John Rawls نے بھی اس تصور کو اپنے نظام فکر میں استعمال کیاہے۔ جدید سائنس اس تیسری سطح کو زیادہ سے زیادہ مگر جلد سے جلد کو ممکن بنانے کا نام ہے۔ اس کا اسلام سے اور اسلام کی خدمت سے کوئی تعلق نہیں۔ جناب ذاکر نائیک صاحب کی تمام تحریروں کے جائزے سے معلوم ہوتا ہے کہ موصوف نے جدید فلسفہ اور جدید فلسفہ سائنس کی امہات کتب سے استفادہ نہیں کیا  ورنہ وہ اس قسم کی بھیانک علمی اغلاط کا ارتکاب نہیں کرتے، محض ان کا اخلاص ان کی لاعلمی کا متبادل نہیں بن سکتا۔ سائنسی منہاج علم میں کسی نتیجے، تجربے، یا دریافت کو ٹھوس حقیقت کہناایک غیر سائنسی اور غیر علمی رویہ ہے۔

جدیدیت پسندوں کی سائیکالوجی سے مرعوبیت کی حقیقت:

            عام طور پرجدیدیت پسند علم النفس سائیکالوجی کو عہد جدید کا عظیم علم سمجھتے ہیں ان کا ناقص خیال

 ہے کہ نفسیات علم روحانیات کے نئے در وا کرکے نئے دریچے کشادہ کرے گی جبکہ فی الحقیقت           نفسیات کا روح سے کوئی تعلق ہی نہیں ہے اور کسی بڑے نفسیات داں نے نفسیات کو روحانی  مسائل کے لیے  پیش

ہی نہیں کیا، فائن مین نفسیات کے جعلی اور مصنوعی علم کے بارے میں عجیب و غریب  اور اہم خیالات پیش کرتا ہے، سائیکالوجی کا دعویٰ ہے کہ وہ انسان کو جان سکتی ہے فائن مین کہتا ہے کہ انسان اپنے علم کی بنیاد پر ابھی تک کتے جیسے سادہ جانورکے مزاج، ذہن اور نفس بھی جاننے سے قاصر ہیں جو انسان کے مقابلے میں زیادہ سادہ حیوان ہے کیونکہ ہر انسان دوسرے انسان سے یکسر مختلف ہے لیکن نفسیات داں اس کو نہیں پہچان سکا :

            Next, we consider the science of psychology. Incidentally, psychoanalysis is not a science: it is at best a medical process, and perphaps even more like witch-doctoring. It has a theory as to what causes disease – lots of different “spirits,” etc. The witch doctor has a theory that a disease like malaria is caused by a spirit which comes into the air it is not cured by shaking a snake over it, but quinine does help malaria. So, if you are sick, I would advise that you go to the witch doctor because he is the man in the tribe who knows the most about the disease; on the other hand, his knowledge is not science. Psychoanalysis has not been checked carefully by experiment, and there is no way to find a list of the number of cases in which it works, the number of cases in which it does not work, etc.1

The other branches of psychology, which involve things like the physiology of sensation-what happens in the eye, and what happens in the brain-are, if you wish, less interesting. But some smaIl but real progress has been made in studying them. One of the most interesting technical problems may or may not be called psychology.

             The central problem of the mind, if you will, or the nervous system, is this: when an animal learns something, it can do something different than it could before, and its brain cell must have changed too, if it is made out of atoms. In what way is it different? We do not know where to look, or what to look for, when something is memorized. We do not know what it means, or what change there is in the nervous system, when a fact is learned. This is a very important problem which has not been solved at all. Assuming, however, that there is some kind of memory thing, the brain is such an enormous mass of interconnecting wires and nerves that it probably cannot be analyzed in a straightforward manner. There is an analog of this to computing machines and computing elements, in that they also have a lot of lines, and they have some kind of element,

 

  1. P. Feynman, Six Easy Pieces, U.S.A., Helix Books ,1995, p.63.

analogous, perhaps, to the synapse, or connection of one nerve to another. This is a very interesting subject which we have not the time to discuss further-the relationship between thinking and computing machines. It must be appreciated, of course, that this subject will tell us very little about the real complexities of ordinary human behavior. All human beings are so different. It will be a long time before we get there. We must start much further back. If we could even figure out how a dog works, we would have gone pretty far. Dogs are easier to understand, but nobody yet knows how dogs work.

1. سائنس کو ایک فطری طریقہ علم سمجھا جاتا ہے لیکن فائن مین ان طریقوں کو ہی فطری نہیں سمجھتا

جن کے ذریعے سائنس یا فطرت کا علم حاصل کیا جارہا ہے، اس سوال پر نہایت گہرے غور و تدبر کی ضرورت ہے کہ جب حصولِ علم فطرت کے طریقے اور طریقۂ علم ہی غیر فطری ہوں تو ان سے فطری علم کیسے حاصل ہوسکتا ہے؟

It is very difficult to find an equation for which such a fantastic number is a natural root. Other possibilities have been thought of; one is to relate it to the age of the universe. Clearly, we have to find another large number somewhere. But do we mean the age of the universe in years? No, because years are not “natural”; they were devised by men.

2. سائنس قیاس و گمان پر چلتی ہے:

سائنس اندازوں اور قیاس و گمان پر چلتی ہے یہ حتمی ذریعۂ علم نہیں ،فائن میں کی شہاد ت پڑھیے: 

The uncertainty principle “protects” quantum mechanics.  Heisenberg recognized that if it were possible to measure the momentum and the position simultaneously with a greater accuracy, the quantum mechanics would collapse. So

 

  1. Ibid., p. 64. 2. Ibid., p. 110.

he proposed that it must be impossible. Then people sat down and tried to figure out ways of doing it, and nobody could figure out a way to measure the position and the momentum of any thing-a screen, an electron, a billiard ball, anything-with any greater accuracy. Quantum mechanics maintains its perilous but accurate existence.

1.Thus we are confronted with a large number of particles, which together seem to be the fundamental constituents of matter. Fortunately, these particles are not all different in their interactions with one another. In fact, there seem to be just four kinds of interaction between particles which, in the order of decreasing strength, are the nuclear force, electrical interactions, the beta-decay interaction, and gravity. The photon is coupled to all charged particles and the strength of the interaction is measured by some number, which is 1/137. The detailed law of this coupling is known, that is Quantum Electrodynamics. Gravity is coupled to all energy, but its coupling is extremely weak, much weaker than that of electricity. This law is also known. Then there are the so- called weak decays-beta decay, which causes the neutron to disintegrate into proton, electron, and neutrino, relatively slowly. This law is only partly known. The so-called strong interaction, the meson-baryon interaction,  has a strength of 1 in this scale, and the law is  completely unknown, although there are a number of known rules, such as that the number of baryons does not change in any reaction. This then, is the horrible condition of our physics

 

  1. Ibid., p.38.

today. To summarize it, I would say this: outside the nucleus, we seem to know all; inside it, quantum mechanics is valid-the principles of quantum mechanics have not been found to fail. The stage on which we put all of our knowledge, we would say, is relativistic space-time; perhaps gravity is involved in space-time. We do not know how the universe got started, and we have never made experiments which check our ideas of space and time accurately, below some tiny distance, so we only know that our ideas work above that distance. We should also add that the rules of the game are the quantum mechanical principles, and those principles apply, so far as we can tell, to the new particles as well as to the old. The origin of the forces in nuclei leads us to new particles, but unfortunately they appear in great profusion and we lack a complete understanding of their interrelationship, although we already know that there are some very surprising relationships among them. We seem gradually to be groping toward an understanding of the world of sub-atomic particles, but we really do not know how far we have yet to go in this task.

1. جدیدسائنس: تلاشِ حقیقت نہیں تخلیق حقیقت کا سفر ہے:

            کانٹ کے فلسفے کے بعد جدید سائنس کے ذریعے حقیقت کی تلاش کا سفر ختم ہوگیا۔ کانٹ نے بتا دیا کہ حقیقت مطلق  تلاش نہیں کی جاسکتی بلکہ تخلیق کی جاسکتی ہے، انسان اپنے ذہن کے مطابق اس  کائنات کو اپنی ذہنی ساخت سے ہم آہنگ کرسکتاہے لہٰذا کانٹ کے بعد سائنس تلاش حقیقت کے بجائے  تخلیق حقیقت کاطریقہ  بن گئی،  اب اگر اس علمی تناظر میں ہیگل کے فکر کو شامل کرلیا جائے جو کانٹ کے اس خیال سے متفق نہیں کہ ذہن انسانی کی ساخت بارہ categories میں محدود اور مشتمل ہے تو ذہن

انسانی کی ساخت جیسے جیسے بدلتی جاتی ہے تخلیق حقیقت [Creation of reality] کا عمل بھی ویسے

 

  1. Ibid., pp.43-45.

ویسے بدلتا جاتا ہے، یعنی حقیقت فی نفسہ کچھ نہیں ہوتی، نفس انسانی ہی، اصل نص ہے، وہی رب ہے، وہی معبود حقیقی ہے۔ لہٰذا نفس الٰہ بن گیا اور سائنس اس پرستش نفس کے اسباب و ذرائع مہیا کرنے والا سرعت پذیر طریقہ قرار پایا،یہ ایک تاریخی حقیقت ہے کہ حقیقت بذاتہ خود حقیقت ہوتی ہے۔ حقیقت کی شناخت ذہن انسانی پر انحصار نہیں کرتی، وہ اپنے ہونے کا جواز اپنے اندر رکھتی ہے۔ مفروضے کی حقیقت میں تبدیلی کی کیا توجیہہ ہے؟ یعنی سائنسی علم میں پہلے مفروضہ بتایا جائے پھر اس مفروضے کو امکانی حقیقت [Probable / possible truth] میں تبدیل کرنے کے لیے تجربات، مشاہدات اور نتائج کی دنیا آباد کی جائے۔ حقیقت تو حقیقت رہے گی وہ مفروضہ کیوں بنی اور مفروضے سے ایک امکانی حقیقت میں کیوں تبدیل ہوئی؟ مفروضے سے امکانی حقیقت بننے کا عمل اصلاً سائنسی عمل ہے کیونکہ اس سائنسی طریقے میں حقیقت اہم نہیںبلکہ طریقہ[method]اہم ہے جس کو اختیار کرتے ہی مفروضہ[Hypothesis] امکانی حقیقت میں تبدیل ہوجاتا ہے جسے ذاکر نائیک صاحب خواہ مخواہ ٹھوس اور قطعی حقیقت قرار دے رہے ہیں ،سائنس کا اصل میدان ہدف نہ حقیقت ہے نہ کائنات بلکہ ذہن انسانی سے ابلنے والے تخلیقی لہو و لعب کو مادی پیکر میں کس طرح ڈھالا جائے اور ارادہ انسانی کو مسلط کرنے میں مادی طور پر کس کس طرح اطلاقات کے امکان بروئے کار لائے جائیں۔ یہ ذہن انسانی ہی وہ اصل شے ہے جو حقیقت کو مفروضہ اور مفروضے کو حقیقت میں ڈھال دیتا ہے۔ fact اور حقیقت [reality] اپنے ہونے کے لیے کسی کے محتاج نہیں۔ یہ ماورائے اقدار نہیں ہوسکتے، یہ غیر اقداری نہیں بلکہ اقداری [value loaded] ہوتے ہیں۔

حقیقت تک رسائی درست علمیت کے ذریعے ممکن ہے:

            حقیقت ایک چیز ہے اور حقیقت کا علم دوسرا معاملہ ہے، جب ہم علم کی بات کرتے ہیں تو ایک subject ہوگا اور ایک object ہوگا ۔object کو جاننے کا طریقہ جیسا کہ وہ ہے یا جیسا کہ میں جان پایا یہ فہم و ادراک کی دو الگ الگ سطحیں ہیں۔ یہ دو فلسفے ہیں:]١[ ایک یہ کہ حقیقت فی نفسہ جانی جاسکتی ہے، ]٢[دوسرے مکتب کا خیال ہے کہ حقیقت نہیں جانی جاسکتی سقراط، افلاطون، ڈیکارٹ، اسپینوزا اور لائنزز وغیرہ کہتے ہیں کہ حقیقت جانی جاسکتی ہے لیکن اس کے لیے صحیح علمیت کو اختیار کرنا ہوگا علمیت غلط ہوگی تو حقیقت کو نہیں جان سکتے ۔دوسرے مکتب فکر کا بانی کانٹ تھا۔ اس کا موقف ہے کہ آپ حقیقت کو ویسا نہیں جان سکتے جیسا کہ وہ ہے، بلکہ انسان حقیقت پر اپنے ذہنی سانچوں [structure of mind] کا اطلاق کرتاہے اس کے نتیجے میں جو ادراک ہوگا وہ فرد کا انفرادی ادراک ہوگا لہٰذا حقیقت فی نفسہ جانی ہی نہیں جاسکتی اصلاً آدمی حقیقت تخلیق کرتا ہے۔ دونوں مکاتب فکر میں اختلاف حقیقت کے فہم وادراک یعنی جاننے پر ہے وجود حقیقت پر نہیں ہے ۔ حقیقت کے وجود کے دونو ںقائل ہیں ۔

حقیقت فی نفسہ کو جانناممکن نہیں: کانٹ :

            کانٹ کے خیال میں فرد زماں و مکاں کے چشموں سے حقیقت کو جانتا ہے اس کے بغیرہمارے لیے حقیقت کو جاننا ممکن ہی نہیں اگر ان چشموں کے بغیر حقیقت کو جانا جاسکتا تو ہم شاید حقیقت کو فی نفسہ جان سکتے لیکن اصلاً حقیقت کا تجربہ ان چشموں کے بغیر کرہی نہیں سکتے ادراک حقیقت جب دو بیرونی عناصر پر منحصر رہ گیا تو حقیقت کی حقیقت کو پانا ممکن ہی نہیں رہتا۔ لہٰذا ہم حقیقت کو تخلیق کرسکتے ہیں۔ لیکن کیا حقیقت کی تخلیق ہوسکتی ہے یا یہ عمل قرب حقیقت تک پہنچ سکتا ہے؟ کانٹ کے منہاج علم میں یہ سوالات نہیںاٹھائے جاسکتے کہ وہ ماورائے عقل معاملات کا انکار نہیں کرتا لیکن چونکہ انسانی عقل اور دائرہ علم ان کے وجود کا اثبات نہیں کرتے لہٰذا ان امور پروہ کوئی کلام نہیں کرتا، دوسرے معنوں میں ان امور غیب ماورائے عقل و فہم و حواس معاملات اور قضایا پر کچھ نہیں کہا جاسکتا بہ ظاہر وہ ماورائے عقل امور کی نہ ترید کرتاہے نہ تائید ۔ لیکن عملاً مغرب میں کانٹ کے اس فلسفے نے انسان کے سوا ہر حقیقت کا انکار کردیا اور اس طرح رفتہ رفتہ ما بعد الطبیعیاتی سوالات کودائرہ علم سے باہر نکال کر ان کو خیالی mythological قرار دے دیا گیا۔

وجودِ حقیقت، اعتراف حقیقت پر منحصر نہیں:

            رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم  ایک حقیقت ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم  کا وجود ایک حقیقت ہے ، یہ حقیقت ایک مسلمان کے لیے رسالت مآبۖبحیثیت پیغمبر کی ہے لیکن ایک غیر مسلم، کافر اور مشرک کے لیے اس عالمگیر، غیر متغیر، ابدی اور قطعی حقیقت کی کوئی حقیقت نہیں لیکن اگر کوئی کافر رسالت مآب کو حقیقت نہیں مانتا تو اس سے حقیقت بدل نہیں جاتی، حقیقت کا اعتراف وجود حقیقت کے لیے  ضروری نہیں مسئلہ صرف یہ ہے کہ  ایک ہی حقیقت مابعد الطبیعیاتی تناظر بدل جانے سے بدل جاتی ہے۔ غیر مسلم کے لیے حقیقت نہیں رہتی لیکن انکار رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم سے رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم کی حیثیت اورحقیقت تبدیل نہیں ہوجاتی کیونکہ آپ کا رسول ہونا کسی کے ماننے یا مسترد کرنے پر منحصر نہیں ہے۔ آپ فی الواقع رسول ہیں  خواہ ایک متنفس بھی آپۖ کو تسلیم نہ کرے، جس طرح اللہ تعالیٰ ایک حقیقت ہے خواہ دنیا کے تمام انسان اس حقیقت ازلی و ابدی کاانکار کر دیں۔ جناب ذاکر نائیک صاحب اور دیگر جدیدیت پسند مخلص مسلم مفکرین کا المیہ یہ ہے کہ وہ سائنس کی حقیقت بتانے، اس کی خامیاں اور کمزوریاں واضح کرنے، اس کے تضادات تنا قضات اور ناکامیاں نمایاں کرنے کے بجائے اس سائنس پر لوگوں کے ایمان کو مضبوط کرنے میں مصروف ہیں۔ اگر نائیک صاحب و دیگر مخلصین سائنس پر مغرب میں لکھے گئے نقد کا غائر مطالعے کرلیتے  تو وہ اس نقد کی بنیاد پر سائنس کو رد کرسکتے تھے۔ مغرب کو اس کے اپنے آئینے میں اس کا چہرہ دکھا سکتے تھے لیکن بجائے اس کے وہ مغرب کے آئینے میں اپنا چہرہ دیکھ رہے ہیں اور اسلام کا چہرہ دکھا رہے ہیں۔ مغرب کو اپنے ایمان کی کسوٹی پر مسلمان کرنے کے بجائے مغرب کے مسترد کردہ سائنسی حقیقت کے فلسفے کی کسوٹی پر اس کو دائرہ ایمان میں داخل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ مغرب کا کوئی فلسفی سائنسی منہاج علم کو unquestionable نہیں سمجھتا لیکن ہمارے جدیدیت پسند مسلم مفکرین اس سوالیہ سائنس [Questionsable, Challengable] پر ایسا ایمان رکھتے ہیں جو مغرب میں بھی ناپید اورمفقود ہے۔ سائنس کو رد کرنے کے بجائے اسے اسلام سے ہم آہنگ کر کے دکھانا سادہ لوحی کی انتہا اور مغرب کے فلسفہ سے کامل عدم واقفیت کا نتیجہ ہے۔

سائنس: امکانی تصدیق، احتمالی تردید :

            جناب ذاکر نائیک صاحب کی تحریروں اور خطبات سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ سائنس کے صغریٰ کبریٰ کو [Principle of Verifaility] کی بنیاد پر متعین فرما رہے ہیں۔ حالانکہ کوہن اور لے کاٹوش جیسے Structuralists نے ثابت کر دیا کہ سائنس نہ کسی چیز کی مکمل توثیق کرسکتی ہے نہ مکمل تردید، یعنی سائنس امکانی توثیق [probably verifiy] اور امکانی تردید [probably falsify] کرتی ہے لہٰذا اٹھارہویں صدی کے سائنسی مفروضوں کی بنیاد پر نائیک صاحب کا یہ سمجھنا کہ سائنس کسی شے کی تصدیق توثیق، تائید کا کوئی موثر ذریعہ ہے۔ ایک غیر علمی نقطہ نظر ہے۔ سائنسی حقیقت وہ حقیقت ہوگی جس کا مشاہدہ، تجربہ، حواس خمسہ کی بنیاد پر اسی طریقے سے دنیا کا کوئی بھی شخص کرسکے جس طرح یہ حقیقت کسی اورنے تلاش کی یا دیکھی ہے اس اصول کی بنیاد پر generalizaed truth بیان کیے جاتے ہیں۔ حقائق کو جاننے کا یہ طریقہ Inductivism سے نکلا ہے جسے فلسفے اور سائنس کے منہاج میں بڑے فلاسفہ نے علمی دلائل سے مسترد کر کے اس کی تمام خامیاں واضح کر دی  ہیں۔ مادی دنیاکے حوالے سے کسی بھی دعوے کو حواس خمسہ کی بنیاد پر قطعیت کے ساتھ ثابت نہیں کیا جاسکتا کیوں کہ اس عمل اور طریقے میں تجربہ ہر فرد کا انفرادی [personal] ہوتا ہے لیکن دعویٰ آفاقی [universal] ہوتا ہے لہٰذا کسی خاص تجربے [particular experience] کی بنیاد پر آفاقی دعوے [universal claim] نہیں کیے جاسکتے۔ یہ طرز عمل جزئیات سے کلیات اخذ کرنے کا عمل ہے جیسے چند شہروں، چند ملکوں میں کالے کوے دیکھ کر یہ دعویٰ کر دیا جائے کہ تمام کوے کالے ہوتے ہیں۔ حالانکہ دنیا کے تمام حصوں کے تمام کووئوں کا عملاً مشاہدہ ممکن ہی نہیں لہٰذا ایسے دعوے ہمیشہ صرف دعوے ہوتے ہیں، اس بنیاد پر حاصل ہونے  والا سچ، نتیجہ، حقیقت محض امکانی سچ [probable truth] ہوتا ہے، مطلق سچ [absolute truth] نہیں ہوتا۔ اس کی تردید کسی لمحے بھی ہوسکتی ہے۔ اس لیے فلسفہ سائنس کی کتب میں Inductivism کی بنیاد پر اخذ کردہ نتائج کو قطعی سچ تسلیم نہیں کیا جاتا کیونکہ اس امکانی سچ کے رد ہونے کا انحصار صرف ایک ایسے تجربے پر منحصر ہے جو ان سابقہ تمام تجربات و نتائج کی نفی کر دے۔ جو اس نظریے کے حق میں دنیا بھر سے جمع کیے گئے تھے مثلاً کوئی سفید، مٹیالا، سرخی مائل سیاہ کوّا دکھائی دے تو یہ آفاقی دعویٰ ایک لمحے میں رد ہوجائے گا کہ تمام کوے کالے ہوتے ہیں۔ اسی لیے فلسفہ سائنس میں کوئی سچ [truth] ایسا نہیں ہے جس کی تردید [falicify] نہ کی جاسکے سائنس کے منہاج میں حقیقت کے حقیقت ہونے یا سچ کے سچ ہونے کا انحصار سائنسی طریقہ کار [Scientific Method] پر ہوتا ہے یعنی اصل سچائی سائنسی طریقے میں پنہاں ہوتی ہے۔ یہ ایک آفاقی حقیقت ہے کہ حقیقت اپنے حقیقت ہونے کے لیے کسی کی محتاج نہیں ہوتی۔وہ فی نفسہ حقیقت ہوتی ہے خواہ کوئی تسلیم کرے یا نہ کرے جو حقیقت کسی تجربے اورطریقے سے گزرنے کے بعد حقیقت کہلائی جائے تو اس وقت تک جب تک کہ دوسرا تجربہ اسے غیر حقیقت ثابت نہ کر دے وہ حقیقت نہیں ہے۔ لہٰذا حقیقت کچھ نہیں ہوتی صرف اگلے تجربے کے مختلف نتیجے سے رد ہو جاتی ہے۔

             کارل پاپر سائنس کے بارے میں اپنی کتاب Conjectures & refutations میں لکھتا ہے:

These considerations led me in the winter of 1919-20 to conclusions which I may now reformulate as follows:

  1. It is easy to obtain confirmations, or verifications, for nearly every theory – if we look for confirmations.
  2. Confirmations should count only if they are the result of risky predictions; that is to say, if, unenlightened by the theory in question, we should have expected an event which was incompatible with the theory – an event which would have refuted the theory.
  3. Every “good” scientific theory is a prohibition: it forbids certain things to happen. The more a theory forbids, the better it is.
  4. A theory which is not refutable by any conceivable event is non-scientific. Irrefutability is not a virtue of a theory (as people often think) but a vice.
  5. Every genuine test of a theory is an attempt to falsify it, or to refute it. Testability is falsifiability; but there are degrees of testability: some theories are more testable, more exposed to refutation, than others; they take, as it were, greater risks.
  6. Confirming evidence should not count except when it is the result of a genuine test of the theory; and this means that it can be presented as a serious but unsuccessful attempt to falsify the theory. (I now speak in such cases of “corroborating evidence.”)
  7. Some genuinely testable theories, when found to be false, are still upheld by their admirers – for example by introducing ad hoc some auxiliary assumption, or by reinterpreting the theory ad hoc in such a way that it escapes refutation. Such a procedure is always possible, but it rescues the theory from refutation only at the price of destroying, or at least lowering, its scientific status. (I later described such a rescuing operation as a “conventionalist twist” or a “conventionalist stratagem.”)

One can sum up all this by saying that the criterion of the scientific status of a theory is its falsifiability, or refutability, or testability.

At the same time I realized that such myths may be developed, and become testable; that historically speaking all – or very nearly all – scientific theories originate from myths, and that a myth may contain important anticipations of scientific theories. Examples are Empedocles’ theory of evolution by trial and error, or Parmenides’ myth of the unchanging block universe in which nothing ever happens and which, if we add another dimension, becomes Einstein’s block universe (in which, too, nothing ever happens, since everything is, four-dimensionally speaking, determined and laid down from the beginning). I thus felt that if a theory is found to be non-scientific, or “metaphysical” (as we might say), it is not thereby found to be unimportant, or insignificant, or “meaningless,” or “nonsensical.” But it cannot claim to be backed by empirical evidence in the scientific sense – although it may easily be, in some genetic sense, the “result of observation.”

(There were a great many other theories of this pre-scientific or pseudo-scientific character, some of them, unfortunately, as influential as the Marxist interpretation of history; for example, the racialist interpretation of history – another of those impressive and all-explanatory theories which act upon weak minds like revelations.)

Thus the problem which I tried to solve by proposing the criterion of falsifiability was neither a problem of meaningfulness or significance, nor a problem of truth or acceptability. It was the problem of drawing a line (as well as this can be done) between the statements, or systems of statements, of the empirical sciences, and all other statements – whether they are of a religious or of a metaphysical character, or simply pseudo-scientific. Years later – it must have been in 1928 or 1929 – I called this first problem of mine the “problem of demarcation.” The criterion of falsifiability is a solution to this problem of demarcation, for it says that statements or systems of statements, in order to be ranked as scientific, must be capable of conflicting with possible, or conceivable, observations.

1. سائنس معروضی علم نہیں: فیرابینڈ :

”سائنٹفک میتھڈ ” جسے جدیدیت پسند مفکرین اور نائیک صاحب علم کا ذریعہ سمجھتے ہیں اور اس  سے مرعوبیت کے  باعث سائنٹفک میتھڈ کے ذریعے اسلام اور قرآن کی حقانیت ثابت کرتے ہیں اس صدی کے اہم مفکر Feyerabendسے واقف نہیں جسے سائنس اور فلسفۂ سائنس کی دنیا کے اہم ترین لوگوں میں

 

  1. K. P. Popper, Conjectaues and Refutation. London: Routledge & Kegan Paul, 1963, pp. 36-39 .

 شمار کیا جاتا ہے اور اس کی کتاب “Against Method” نے سائنٹفک میتھڈ پر نقد کے ذریعے علم کی دنیا میں زلزلہ برپا کردیا تھا اپنی کتاب Science in a Free society میں فیرا بینڈ نے سائنس پر زبردست نقد کیا ہے فیرابینڈ سائنس کو معروضی علم [objective knowledge] تسلیم نہیںکرتاوہ سائنس کوایک معمہ، چیستان Mythسے مماثل قرار دیتا ہے اس کے خیال میں سائنس ان بے شمار طریقوں میں سے ایک طریقہ ہے جو ذہن انسانی نے حصول علم کے لیے دریافت کیے ہیں لیکن

سائنس لازماً بہترین طریقہ نہیں ہے Not necessarily the best ، اس کے خیال میں سائنس کو ایک طرز زندگی اور علم کے طور پر قبول کرنے والوں نے بغیر جانچ پڑتال کے قبول کرلیا ہے قبول کرنے والے اس بات سے واقف نہیں ہیں کہ اس کی حدود کیا ہیں اور اس کے فوائد و ثمرات کیا ہیں کیونکہ ایسا کرنے والوں نے پہلے ہی طے کر رکھا تھا کہ سائنس لازماً تمام علوم سے بہتر بالا تر اور افضل ترین علم ہے وہ کہتاہے کہ جس طرح چرچ کو ریاست سے علیحدہ کیا گیا بالکل اس طرح سائنس اور ریاست کا تعلق ختم ہو نا چاہیے تاکہ ایک آزاد فری[Free] سوسائٹی  جنم لے سکے جہاں تمام روایات ، تمام روایتی علوم، تمام دانش ہائے سابق  علم کے حصول کے تمام طریقوںکو یکساں طریقے اور ذرائع سے پھلنے پھولنے کے مواقع میسر ہوںنہ کہ تمام ریاستی ڈھانچہ صرف سائنس کی سرپرستی کے لیے وقف ہو اس کے خیال میں سائنس جمہوریت کے لیے بد ترین خطرہ ہے لہٰذا سائنس کی ترقی اور رفتار کی نگرانی عوام کے سپرد کردینی چاہیے تاکہ اسے جمہوری طریقے سے قابو کیا جاسکے۔

            عموماً سائنس کو بحیثیت علم فائق اور برتر سمجھنے کی وجہ اس کی تجربیت ،عقلیت ، دلیل کی قوت و افادیت  وغیرہ قرار دیے جاتے ہیں مگر فیرابینڈ کے خیال میں دلیل اور عقلیت کی تشریح کبھی واضح طور پر نہیں کی جاسکتی:

Reason and Rationality are ambiguous and never clearly explained.

            اس سلسلے میںاس کے فلسفیانہ دلائل اور علمی اعتراضات اس کی کتاب Farewell to Reason میں تفصیل سے پڑھے جاسکتے ہیں۔

            وہ سائنس کو نظام [System] تسلیم کرنے سے انکار کرتا ہے وہ اسے collageقرار دیتا ہے وہ سائنسی علم کی وحدت کا قائل نہیں ہے وہ Disunity of science کے نظریے کا علمبردار ہے اس کے خیال میں Science is not one thing, it is many.فیرابینڈ سائنس کو مغربی استعماریت کے تسلط اور فروغ کا ایک اہم ہتھیار سمجھتاہے وہ کہتا ہے کہ معروضی  طور پر سائنس، آسٹرالوجی Astrology اور   voodoo میںکوئی فرق نہیں ہے۔

            وہ سائنس کو حصول علم کا واحد عقلی پیمانہ ، طریقہ، منہاج تسلیم کرنے سے انکار کرتا ہے وہ جمالیات ، ذاتی خواہشات آرزوؤں اور سماجی عوامل کے کردار کو عقلیت اور تجربیت کے مقابلے میں سائنس کی ترقی کے لیے زیادہ اہم ، موثر اور قابل ذکر سمجھتا ہے اس کے خیال میں سائنس کے میدان میں صرف “anything goes”کا اصول موثر رہتاہے اس نقد پر John Krige کا رد عمل یہ تھا کہ Any thing goes means that in practice every thing stays. اس کی تمام تحریروں میں مغربی دنیا میں سائنس کی پرستش اور حد سے زیادہ اثر پذیری پر سخت نقد ملتا ہے وہ سائنس کو علم کے حصول کا بہترین ذریعہ تسلیم کرنے سے انکار کرتا ہے:

We can’t justify the science as the best way of acquiring knowledge.

            اس کے خیال میں سائنسی نتائج و ثمرات سائنس کی عظمت کی دلیل مہیا نہیں کرتے کیونکہ تمام سائنسی نتائج غیر سائنسی عناصر پر انحصار کرتے ہیں:

And the results of science don’t prove its excellence, since these results have often depended on the presence of non  scientific elements.

وہ غیر سائنسی مشاہدات کو نظریات کے مماثل تصور کرتا ہے کیونکہ کوئی مشاہدہ کسی نظریے، بعد الطبیعیات، تصورات اور وجودیات کے بغیر ممکن ہی نہیں:

Observations are just as theoretical (that hypothetical) as theories, “Logically speaking, all terms are “theoretical” 1

            وہ سائنس کو غیر اقداری value nutral نہیں بلکہ اقداری تصور کرتاہے، جو ایک خاص تاریخ ما بعد الطبیعیات اور وجودیات سے برآمد ہوتی ہے:

One of these is that “every positivistic observation language is based upon a metaphysical ontology”2

“the interpretation of a scientific theory depends upon nothing but the state of affairs it describes” 3

اس دور میں کہ جب فلسفہ رہنمائی کرنے کے بجائے سائنس کے مقاصد کا ترجمان بن گیا ہے اور سائنسی اہداف کی تکمیل، تشکیل اور تعمیر کی علمی و عقلی بنیادیں مہیا کررہا ہے اور ایک مغربی مفکر چامر کے الفاظ میں:

“philosophy is worthless unless it makes a positive and quantifiable contribution to the growth of knowledge

 

  1. Philosophical Papers, Volume 1, p. 32 note.
  2. Philosophical Papers, Volume 1, p. 21.
  3. Philosophical Papers, Volume 1, p. 42.

(which, of course, means science)”.

فیرابینڈ اس تصور حاضر کو درست تسلیم نہیں کرتا وہ فلسفے کو سائنس کے خادم کے طور پر برداشت نہیں کرتااس سلسلے میں اس کا شدید نقد اس کی کتابوں میں پڑھا جاسکتاہے۔

                         اسٹین فورڈ انسائیکلوپیڈیا آف فلاسفی میں اس کے فکر و فلسفے کا مختصر جائزہ پیش کیا گیا ہے اور یہ جائزہ فلسفیانہ کم عام فہم زیادہ ہے، ملاخطہ کیجیے:

            By the early 1970s Feyerabend had flown the falsificationist coop and was ready to expound his own perspective on scientific method. In 1970, he published a long article entitled “Against Method” in which he attacked several prominent accounts of scientific methodology. In their correspondence, he and Lakatos subsequently planned the construction of a debate volume, to be entitled For and Against Method, in which Lakatos would put forward the “rationalist” case that there was an identifiable set of rules of scientific method which make all good science science, and Feyerabend would attack it. Lakatos’ unexpected death in February 1974, which seems to have shocked Feyerabend deeply, meant that the rationalist part of the joint work was never completed.

            What’s so great about knowledge? What’s so great about science? What’s so great about truth? We were not going to be disappointed after all! During the following weeks of that term, and for the rest of his year as a visiting lecturer, Feyerabend demolished virtually every traditional academic boundary. He held no idea and no person sacred. With unprecedented energy and enthusiasm he discussed anything from Aristotle to the Azande. How does science differ from witchcraft? Does it provide the only rational way of cognitively organizing our experience? What should we do if the pursuit of truth cripples our intellects and stunts our individuality? Suddenly epistemology became an exhilarating area of investigation.1

            Because his health was poor, Feyerabend started seeing a healer who had been recommended to him. The treatment was successful, and thenceforth Feyerabend used to refer to his own case as an example of both the failures of orthodox medicine and the largely unexplored possibilities of “alternative” or traditional remedies.

“Against Method” is not a book, it is a collage. It contains descriptions, analyses, arguments that I had published, in almost the same words, ten, fifteen, even twenty years earlier… I arranged them in a suitable order, added transitions, replaced moderate passages with more outrageous ones, and called the result “anarchism”. I loved to shock people….2

            He emphasised that older scientific theories, like Aristotle’s Theory of Motion, had powerful empirical and argumentative support, and stressed, correlatively, that the heroes of the scientific revolution, such as Galileo, were not as scrupulous as they were sometimes represented to be. He portrayed Galileo as making full use of rhetoric, propaganda, and various epistemological tricks in order to support the heliocentric position. The Galileo case is crucial for Feyerabend, since the “scientific revolution” is his  paradigm of scientific progress and of radical conceptual  

 

  1. John Krige, Science, Revolution and Discontinuity, Sussex: Harvester Press, 1980, pp. 106-107.
  2. P.K Feyerabend, Against Method: Outline of an Anarchistic Theory of Knowledge, London: New Left Books, 1975,pp.139, 142.

change, and Galileo is his hero of the scientific revolution. He also sought further to downgrade the importance of empirical arguments by suggesting that aesthetic criteria, personal whims and social factors have a far more decisive role in the history of science than rationalist or empiricist historiography would indicate.

            Against Method explicitly drew the “epistemological anarchist” conclusion that there are no useful and exceptionless methodological rules governing the progress of science or the growth of knowledge. The history of science is so complex that if we insist on a general methodology which will not inhibit progress, the only “rule” it will contain, will be the useless suggestion: “anything goes”. In particular, logical empiricist methodologies and Popper’s Critical Rationalism would inhibit scientific progress by enforcing restrictive conditions on new theories.

            Feyerabend saw himself as having undermined the arguments for science’s privileged position within culture, and much of his later work was a critique of the position of science within Western societies. Because there is no scientific method, we can’t justify science as the best way of acquiring knowledge. And the results of science don’t prove its excellence, since these results have often depended on the presence of non-scientific elements, science prevails only because “the show has been rigged in its favour” 1

 and other traditions, despite their achievements, have never been given a chance. The truth, he suggests, is that science is much closer to myth than a scientific philosophy is prepared

 

  1. P.K Feyerabend, Science in a Free Society, New Left Books, 1978, p. 102.

 to admit. It is one of the many forms of thought that have been developed by man, and not necessarily the best. It is conspicuous, noisy, and impudent, but it is inherently superior only for those who have already decided in favour of a certain ideology, or who have accepted it without ever having examined its advantages and its limits.1

            The separation of church and state should therefore be supplemented by the separation of science and state, in order for us to achieve the humanity we are capable of. Setting up the ideal of a free society as “a society in which all traditions have equal rights and equal access to the centres of power”2, Feyerabend argues that science is a threat to democracy. To defend society against science we should place science under democratic control and be intensely sceptical about scientific “experts”, consulting them only if they are controlled democratically by juries of laypeople.

            Many of the more important papers Feyerabend published during the mid-1980s were collected together in Farewell to Reason[ London: Verso, 1987]. The major message of this book is that Relativism is the solution to the problems of conflicting beliefs and of conflicting ways of life. Feyerabend starts by suggesting that the contemporary intellectual scene in Western culture is by no means as fragmented and cacophonous as many intellectuals would have us believe. The surface diversity belies a deeper uniformity, a monotony generated and sustained by the

 

  1. P.K. Feyerabend: Against method, London: Veso, 1975, p. 295.
  2. Ibid., p.9.

cultural and ideological imperialism which the West uses to beat its opponents into submission. Such uniformity, however, can be shown to be harmful even when judged by the standards of those who impose it. Cultural diversity, which already exists in some societies, is a good thing not least because it affords the best defence against totalitarian domination.

            Feyerabend complains that the ideas of reason and rationality are “ambiguous and never clearly explained” 1,  they are defied hangovers from autocratic times which no longer have any content but whose “halo of excellence” [ibid.] clings to them and lends them spurious respectability:

[R]ationalism has no identifiable content and reason, no recognisable agenda over and above the principles of the party that happens to have appropriated its name. All it does now is to lend class to the general drive towards monotony. It is time to disengage Reason from this drive and, as it has been thoroughly compromised by the association, to bid it farewell.2

[R]elativism is the tool with which Feyerabend hopes to “undermine the very basis of Reason” 3. But is it Reason with a capital “R”, the philosophers’ abstraction alone, that is to be renounced, or reason itself too? Feyerabend is on weak ground when he claims that “Reason” is a philosophers’ notion which has no content, for it is precisely the philosopher who is willing to attach a specific content to the  formal notion of rationality (unlike the  layperson, whose

 

  1. P. Feyerabend, Farewell to Reasen, London: Veso Newleft books 1987, p. 10.
  2. Ibid.,p. 13. 3. Ibid.

notion of reason is closer to what Feyerabend calls the “material” conception, where to be rational is “to avoid certain views and to accept others”.1

            One of the projects which Feyerabend worked on for a long time, but never really brought to completion, went under the name “The Rise of Western Rationalism”. Under this umbrella he hoped to show that Reason (with a capital “R”) and Science had displaced the binding principles of previous world-views not as the result of having won an argument, but as the result of power-play. While the first philosophers (the pre-Socratic thinkers) had interesting views, their attempt to replace, streamline or rationalise the folk-wisdom which surrounded them was eminently resistible. Their introduction of the appearance/reality dichotomy made nonsense of many of the things people had previously known. Even nowadays, indigenous cultures and counter-cultural practices provide alternatives to Reason and that nasty Western science.

            However, Feyerabend recognised that this is to present science as too much of a monolith. In most of his work after Against Method, he emphasises what has come to be known as the “disunity of science”. Science, he insists, is a collage, not a system or a unified project. Not only does it include plenty of components derived from distinctly “non-scientific” disciplines, but these components are often vital parts of the “progress” science has made (using whatever criterion of progress you prefer). Science is a collection of theories, practices, research traditions and

 

  1. Ibid., p. 10.

world-views whose range of application is not well-determined and whose merits vary to a great extent. All this can be summed up in his slogan: “Science is not one thing, it is many.”

Likewise, the supposed ontological correlate of science, “the world”, consists not only of one kind of thing but of countless kinds of things, things which cannot be “reduced” to one another. In fact, there is no good reason to suppose that the world has a single, determinate nature. Rather we inquirers construct the world in the course of our inquiries, and the plurality of our inquiries ensures that the world itself has a deeply plural quality: the Homeric gods and the microphysicist’s subatomic particles are simply different ways in which “Being” responds to (different kinds of) inquiry. How the world is “in-itself” is for ever unknowable. In this respect, Feyerabend’s last work can be thought of as aligned with “social constructivism”.

            Feyerabend came to be seen as a leading cultural relativist, not just because he stressed that some theories are incommensurable, but also because he defended relativism in politics as well as in epistemology. His denunciations of aggressive Western imperialism, his critique of science itself, his conclusion that “objectively” there may be nothing to choose between the claims of science and those of astrology, voodoo, and alternative medicine, as well as his concern for environmental issues ensured that he was a hero of the anti-technological counter-culture.1

 

  1. http://plato.stanford.edu/entries/feyerabend/[08-08-2010]

What I want to talk about in this lecture is not, strictly speaking, the character of physical law. One might imagine at least that one is talking about nature when one is talking about the character of physical law; but I do not want to talk about nature, but rather about how we stand relative to nature now. I want to tell you . . . what there is to guess, and how one goes about guessing. Someone suggested that it would be ideal if, as I went along, I would slowly explain how to guess a law, and then end by creating a new law for you. I do not know whether I shall be able to do that. . . .In general we look for a new law by the following process. First we guess it. Then we compute the consequences of the guess to see what would be implied if this law that we guessed is right. Then we compare the result of the computation to nature with experiment or experience, compare it directly with observation, to see if it works. If it disagrees with experiment it is wrong. In that simple statement is the key to science. It does not make any difference how beautiful your guess is. It does not make any difference how smart you are, who made the guess, or what his name is- if it disagrees with experiment it is wrong. That is all there is to it. It is true that one has to check a little to make sure that it is wrong, because whoever did the experiment may have reported incorrectly, or there may have been some feature in the experiment that was not noticed, some dirt or something; or the man who computed the consequences, even though it may have been the one who made the guesses, could have made some mistake in the analysis. These are obvious remarks, so when I say if it disagrees with experiment it is wrong, I mean after the experiment has been checked, the calculations have been checked, and the thing has been rubbed back and forth a few times to make sure that the consequences are logical consequences from the guess, and that in fact it disagrees with a very carefully checked

 experiment.

            This will give you a some what wrong impression of science. It suggests that we keep on guessing possibilities and comparing them with experiment, and this is to put experiment into a rather weak position. In fact experimenters have a certain individual character. They like to do experiments even if nobody has guessed yet and they very often do their experiments in a region in which people know the theorist has not made any guesses. For instance, we may know a great many laws, but do not know whether they really work at high energy, because it is just a good guess that they work at high energy. Experimenters have tried experiments at higher energy, and in fact every once in a while experiment produces trouble; that is, it produces a discovery that one of the things we thought right is wrong. In this way experiment can produce unexpected results, and that starts us guessing again. One instance of an unexpected result is the M meson and its neutrino, which was not guessed by anybody at all before it was discovered, and even today nobody yet has any method of guessing by which this would be a natural result.

            You can see, of course, that with this method we can attempt to disprove any definite theory. If we have a definite theory, a real guess, from which we can conveniently compute – consequences which can be compared with experiment, then in principle we can get rid of any theory. There is always the possibility of proving any definite theory wrong; but notice that we can never prove it right. Suppose that you invent a good guess, calculate the consequences, and discover every time that the consequences you have calculated agree with experiment. The theory is then right? No, it is simply not proved wrong. In the future you could compute a wider range of consequences, there could be a wider range of experiments; and you might then discover that the thing is wrong. That is why laws like Newton’s laws for the motion of planets last such a long time. He guessed the law of gravitation, calculated all kinds of consequences for the system and so on, compared them with experiment and it took: several hundred years before the slight error the motion of Mercury was observed.

            During all that time the theory had not been proved wrong. and could be taken temporarily to be right. But it could never be proved right, because tomorrow’s experiment might succeed in proving wrong what you thought was right. We never are definitely right. we can only be sure we are wrong. However. it is rather remarkable how we can have some ideas which will last so long. One of the ways of stopping science would be only to do experiments in the region where you know the law. But experimenters search most diligently, and with the greatest effort, in exactly those places where it seems most likely that we can prove our theories wrong. In other words we are trying to prove ourselves wrong as quickly as possible, because only in that way can we find progress. For example, today among ordinary low energy phenomena we do not know where to look for trouble, we think everything is all right, and so there is no particular big programme looking for trouble in nuclear reactions, or in super-conductivity. In these lectures I am concentrating on discovering fundamental laws. The whole range of physics, which is interesting, includes also an understanding at another level of these phenomena like super-conductivity and nuclear reactions, in terms of the fundamental laws. But I am talking now about discovering trouble, something wrong with fundamental laws, and since among low energy phenomena nobody knows where to look, all the experiments today in this field of finding out a new law, are of high energy.

            Another thing I must point out is that you cannot prove a vague theory wrong. If the guess that you make is poorly expressed and rather vague, and the method that you use for figuring out the consequences is a little vague-you are not sure, and you say, “I think everything’s right because its all due to so and so, and such and such do this and that more or less, and I can sort of explain how this works. . . ,” then you see that this theory is good, because it cannot be proved wrong! Also if the process of computing the consequences is indefinite, then with a little skill any experimental results can be made to look like the expected consequences. You are probably familiar with that in other fields. “A” hates his mother. The reason is, of course, because she did not caress him or love him enough when he was a child. But if you investigate you find out that as a matter of fact she did love him very much, and everything was all right. Well then, it was because she was over-indulgent when he was a child! By having a vague theory it is possible to get either result. The cure for this one is the following. If it were possible to state exactly, ahead of time, how much love is not enough, and how much love is over-indulgent, then there would be a perfectly legitimate theory against which you could make tests. It is usually saidwhen this is pointed out, “When you are dealing with psychological matters things can’t be defined so precisely.” Yes, but then you cannot claim to know anything about it.

            You will be horrified to hear that we have examples in physics of exactly the same kind. We have these approximate symmetries, which work something like this. You have an approximate symmetry, so you calculate a set of consequences supposing it to be perfect.

            When compared with experiment, it does not agree. Of course-the symmetry you are supposed to expect is approximate, so if the agreement is pretty good you say, “Nice!,” while if the agreement is very poor you say, “Well, this particular thing must be especially sensitive to the failure of the symmetry.” Now you may laugh, but we have to make progress in that way. When a subject is first new, and these particles are new to us, this jockeying around, this “feeling” way of guessing at the results, is the beginning of any science. The same thing is true of the symmetry proposition in physics as is true of psychology, so do not laugh too hard. It is necessary in the beginning to be very careful. It is easy to fall into the deep end by this kind of vague theory. It is hard, to prove it wrong, and it takes a certain skill and experience not to walk off the plank in the game. . . .

            Because I am a theoretical physicist, and more delighted with this end of the problem, I want now to concentrate on how to make the guesses.

            As I said before, it is not of any importance where the guess comes from; it is only important that it should agree with experiment, and that it should be as definite as possible. “Then,” you say, “that is very simple. You set up a machine, a great computing machine, which has a random wheel in it that makes a succession of guesses, and each time it guesses a hypothesis about how nature should work it computes immediately the consequences, and makes a comparison with a list of experimental results it has at the other end.” In other words, guessing is a dumb man’s job. Actually it is quite the opposite, and I will try to explain why.

            The first problem is how to start. You say, “Well I’d start off with all the known principles.” But all the principles that are known are inconsistent with each other, so something has to be removed. We get a lot of letters from people insisting that we ought to make holes in our guesses. You see, you make a hole, to make room for a new guess. Somebody says, “You know, you people always say that space is continuous. How do you know when you get to a small enough dimension that there really are enough points in between, that it isn’t just a lot of dots separated by little distances?” Or they say, “You know those quantum mechanical amplitudes you told me about, they’re so complicated and absurd, what makes you think those are right? May be they aren’t right.” Such remarks are obvious and are perfectly clear to anybody who is working on this problem. It does not do any good to point this out. The problem is not only what might be wrong but what, precisely, might be substituted in place of it. In the case of the continuous space, suppose the precise proposition is that space really consists of a series of dots, and that the space between them does not mean anything, and that the dots are in a cubic array. Then we can prove immediately that this is wrong. It does not work. The problem is not just to say something might be wrong, but to replace it by something and that is not so easy. As soon as any really definite idea is substituted it becomes almost immediately apparent that it does not work.

            The second difficulty is that there is an infinite number of possibilities of these simple types. It is something like this. You are sitting working very hard, you have worked for a long time trying to open a safe. Then some Joe comes along who knows nothing about what you are doing, except

that you are trying to open the safe. He says “Why don’t you try the combination 10:20:30?” Maybe you know already that the middle number is 32, not 20. Maybe you know as a matter of fact that it is a five-digit combination. . . . So please do not send me any letters trying to tell me how the thing is going to work. I read them-I always read them to make sure that I have not already thought of what is suggested-but it takes too long to answer them, because they are usually in the class “try 10:20:30.” As usual, nature’s imagination far surpasses our own, as we have seen from the other theories which are subtle and deep. To get such a subtle and deep guess is not so easy. One must be really clever to guess, and it is not possible to do it blindly by machine.

            I want to discuss now the art of guessing nature’s laws. It is an art. How is it done? One way you might suggest is to look at history to see how the other guys did it. So we look at history.

            We must start with Newton. He had a situation where he had incomplete knowledge, and he was able to guess the laws by putting together ideas which were all relatively close to experiment; there was not a great distance between the observations and the tests. That was the first way, but today it does not work so well.

The next guy who did something great was Maxwell, who obtained the laws of electricity and magnetism. What he did was this. He put together all the laws of electricity, due to Faraday and other people who came before him, and he looked at them and realized that they were mathematically inconsistent. In order to straighten it out he had to add one

term to an equation. He did this by inventing for himself a model of idler wheels and gears and so on in space. He found what the new law was-but nobody paid much attention because they did not believe in the idler wheels. We do not believe in the idler wheels today, but the equations that he obtained were correct. So the logic may be wrong but the answer is right.

            In the case of relativity the discovery was completely different. There was an accumulation of paradoxes; the known laws gave inconsistent results. This was a new kind of thinking, a thinking in terms of discussing the possible symmetries of laws. It was especially difficult, because for the first time it was realized how long something like Newton’s laws could seem right, and still ultimately be wrong. Also it was difficult to accept that ordinary ideas of time and space, which seemed so instinctive, could be wrong.

            Quantum mechanics was discovered in two independent ways-which is a lesson. There again, and even more so, an enormous number of paradoxes were discovered experimentally, things that absolutely could not be explained in any way by what was known. It was not that the knowledge was incomplete, but that the knowledge was too complete. Your prediction was that this should happen-it did not. The two different routes were one by Schrodinger, who guessed the equation, the other by Heisenberg, who argued that you must analyze what is measurable. These two different philosophical methods led to the same discovery in the end.

            More recently, the discovery of the laws of the weak decay I spoke of, when a neutron disintegrates into a proton, an electron and an anti-neutrino-which are still only partly known-add up to a somewhat different situation. This time it was a case of incomplete knowledge, and only the equation was guessed. The special difficulty this time was that the experiments were all wrong. How can you guess the right answer if, when you calculate the result, it disagrees with experiment? You need courage to say the experiments must be wrong. I will explain where that courage comes from later. Today we have no paradoxes-maybe. We have this infinity that comes in when we put all the laws together, but the people sweeping the dirt under the rug are so clever that one sometimes thinks this is not a serious paradox. Again, the fact that we have found all these particles does not tell us anything except that our knowledge is incomplete. I am sure that history does not repeat itself in physics, as you can tell from looking at the examples I have given. The reason is this. Any schemes-such as “think of symmetry laws,” or “put the information in mathematical form,” or “guess equations”-are known to everybody now, and they are all tried all the time. When you are struck, the answer cannot be one of these, because you will have tried these right away. There must be another way next time. Each time we get into this log-jam of too much trouble, too many problems, it is because the methods that we are using are just like the ones we have used before. The next scheme, the new discovery, is going to be made in a completely different way. So history does not help us much. . . .

            It is not unscientific to make a guess, although many people who are not in science think it is. Some years ago I had a conversation with a layman about flying saucers because I am scientific I know all about flying saucers! I said “I don’t think there are flying saucers.” So my antagonist said, “Is it impossible that there are flying saucers? Can you prove that there are flying saucers? Can you prove that it’s impossible?” “No,” I said, “I can’t prove it’s impossible. It’s just very unlikely.” At that he said, “You are very unscientific. If you can’t prove it impossible then how can you say that it’s unlikely?” But that is the way that is scientific. It is scientific only to say what is more likely and what is less likely, and not to be proving all the time the possible and impossible. To define what I mean, I might have said to him, “Listen, I mean that from my knowledge of the world that I see around me, I think, that it is much more likely that the reports of flying saucers are the results of the known irrational characteristics of terrestrial intelligence than of the unknown rational efforts of extraterrestrial intelligence.” It is just more likely, that is all. It is a good guess. And we always try to guess the most likely explanation, keeping in the back of the mind the fact that if it does not work we must discuss the other possibilities. . . .

            That reminds me of another point, that the philosophy or ideas around a theory may change enormously when there are very tiny changes in the theory. For instance, Newton’s ideas about space and time agreed with experiment very well, but in order to get the correct motion of the orbit of Mercury, which was a tiny, tiny

difference, the difference in the character of the theory needed was enormous. The reason is that Newton’s laws were so simple and so perfect, and they produced definite results. In order to get something that would produce a slightly different result it had to be completely different. In stating a new law you cannot make imperfections on a perfect thing; you have to have another perfect thing. So the difference in philosophical ideas between Newton’s and Einstein’s theories of gravitation are enormous.

            What are these philosophies? They are really tricky ways to compute consequences quickly. A philosophy, which is sometimes called an understanding of the law, is simply a way that a person hold the laws in his mind in order to guess quickly at consequences. Some people have said, and it is true in cases “like Maxwell’s equations, “Never mind the philosophy, never mind anything of this kind, just guess the equations. The problem is only to compute the answers so that they agree with experiment, and it is not necessary to have a philosophy, or argument, or words, about the equation.” That is good in the sense that if you only guess the equation you are not prejudicing yourself, and you will guess better. On the other hand, maybe the philosophy helps you to guess. It is very hard to say.

            For those people who insist that the only thing that is important is that the theory agrees with experiment, I would like to imagine a discussion between a Mayan astronomer and his student. The Mayans were able to calculate with great precision predictions, for example, for eclipses and for the position of the moon in the sky, the position of Venus,

etc. It was all done by arithmetic. They counted a certain number and subtracted some numbers, and so on. There was no discussion of what the moon was. There was no discussion even of the idea that it went around. They just calculated the time when there would be an eclipse, or when the moon would rise at the full, and so on. Suppose that a young man went to the astronomer and said, “I have an idea. May be those things are going around, and there are balls of something like rocks out there, and we could calculate how they move in a completely different way from just calculating what time they appear in the sky.” “Yes,” says the astronomer, “and how accurately can you predict eclipses?” He says, “I haven’t developed the thing very far yet.” Then says the astronomer, “Well, we can calculate eclipses more accurately than you can with your model, so you must not pay any attention to your idea because obviously the mathematical scheme is better.” There is a very strong tendency, when someone comes up with an idea and says, “Let’s suppose that the world is this way,” for people to say to him, “What would you get for the answer to such and such a problem?” And he says, “I haven’t developed it far enough.” And they say, “Well, we have already developed it much further, and we can get the answers very accurately.” So it is a problem whether or not to worry about philosophies behind ideas.

            Another way of working, of course, is to guess new principles. In Einstein’s theory of gravitation he guessed, on top of all the other principles, the principle that corresponded to the idea that the forces are always proportional to the

masses. He guessed the principle that if you are in an accelerating car you cannot distinguish that from being in a gravitational field, and by adding that principle to all the other principles, he was able to deduce the correct laws of gravitation.

            That outlines a number of possible ways of guessing. I would now like to come to some other points about the final result. First of all, when we are all finished, and we have a mathematical theory by which we can compute consequences, what can we do? It really is an amazing thing. In order to figure out what an atom is going to do in a given situation we make up rules with marks on paper, carry them into a machine which has switches that open and close in some complicated way, and the result will tell us what the atom is going to do! If the way that these switches open and close were some kind of model of the atom, if we thought that the atom had switches in it, then I would say that I understood more or less what is going on. I find it quite amazing that it is possible to predict what will happen by mathematics, which is simply following rules which really have nothing to do with what is going on in the original thing. The closing and opening of switches in a computer is quite different from what is happening in nature.

            One of the most important thing in this “guess-compute consequences-compare with experiment” business is to know when you are right. It is possible to know when you are right way ahead of checking all the consequences. You can recognize truth by its beauty and simplicity. It is always easy when you have made a guess,

and done two or three little calculations to make sure that it is not obviously wrong, to know that it is right-at least if you have any experience-because usually what happens is that more comes out than goes in. Your guess is, in fact, that something is very simple. If you cannot “see immediately that it is wrong, and it is simpler than it was before, then it is right. The inexperienced, and crackpots, and people like that, make guesses that are simple, but you can immediately see that they are wrong, so that does not count. Others, the inexperienced students, make guesses that are very complicated, and it sort of looks as if it is all right, but I know it is not true because the truth always turns out to be simpler than you thought. What we need is imagination, but imagination in a terrible straitjacket. We have to find a new view of the world that has to agree with everything that is known, but disagree in its predictions somewhere, otherwise it is not interesting. And in that disagreement it must agree with nature. If you can find any other view of the world which agrees over the entire range where things have already been observed, but disagrees somewhere else, you have made a great discovery. It is very nearly impossible, but not quite to find any theory which agrees with experiments over the entire range in which all theories have been checked, and yet gives different consequences in some other range, even a theory whose different consequences do not turn out to agree with nature. A new idea is extremely difficult to think of. It takes a fantastic imagination.

What of the future of this adventure? What will happen ultimately? We are going along guessing the laws; how many laws are we going to have to guess? I do not know. Some of my colleagues say that this fundamental aspect of our science will go on; but I think there will certainly certainly not be perpetual novelty, say for a thousand years. This thing cannot keep on going so that we are always going to discover more and more new laws. If we do, it will become boring that there are so many levels one underneath the other. It seems to me that -what can happen in the future is either that all the laws become known-that is, if you had enough laws you could compute consequences and they would always agree with experiment, which would be the end of the line or it may happen that the experiments get harder and harder to make, more and more expensive, so you get 99.9 per cent of the phenomena, but there is always some phenomenon which has just been discovered, which is very hard to measure, and which disagrees; and as soon as you have the explanation of that one there is always another one, and it gets slower and slower and more and more uninteresting. That is another way it may end. But I think it has to end in one way or another.

            We are very lucky to live in an age in which we are still making discoveries. It is like the discovery of America-you only discover it once. The age in which we live is the age in which we are discovering the fundamental laws of nature, and that day will never come again. It is very exciting, it is marvellous, but this excitement will have to go. Of course in the future there will be other interests. There will be the interest of the connection of one level of phenomena to another-phenomena in biology and so on, or, if you are talking about exploration, exploring other planets, but there will not still be the same things that we are doing now.

            Another thing that will happen is that ultimately, if it turns out that all is known, or it gets very dull, the vigorous philosophy and the careful attention to all these things that I have been talking about will gradually disappear. The philosophers who are always on the outside making stupid remarks will be able to close in, because we cannot push

them away by saying, “If you were right we would be able to guess all the rest of the laws,” because when the laws are all there they will have an explanation for them. For instance, there are always explanations about why the world is three-dimensional. Well, there is only one world, and it is hard to tell if that explanation is right or not, so that if everything were known there would be some explanation about why those were the right laws. But that explanation would be in a frame that we cannot criticize by arguing that type of reasoning will not permit us to go further. There will be a degeneration of ideas, just like the degeneration that great explorers feel is occurring when tourists begin moving in on a territory.

            In this age people are experiencing a delight, the tremendous delight that you get when you guess how nature will work in a new situation never seen before. From experiments and information in a certain range you can guess what is going to happen in a region where no one has ever explored before. It is a little different from regular

exploration in that there are enough clues on the land discovered to guess what the land that has not been discovered is going to look like. These guesses, incidentally, are often very different from what you have already seen-they take a lot of thought.

            What is it about nature that lets this happen, that it is possible to guess from one part what the rest is going to do? That is an unscientific question: I do not know how to answer it, and therefore I am going to give an unscientific answer. I think it is because nature has a simplicity and

therefore a great beauty.1

  1. Richard Feynman, The Character of Physical Law. MIT Press

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked